آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکینڈل،شہباز شریف کا 14روزہ جسمانی ریمانڈ منظور

اسلام آباد(پبلک نیوز) آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکینڈل میں سابق وزیراعلیٰ شہباز شریف کا چودہ روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کر لیا گیا۔ احتساب عدالت نے نیب کو شہبازشریف کو 30 اکتوبر کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔ 

آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل کیس کی سماعت، احتساب عدالت میں سید نجم الحسین نے کیس کی سماعت کی۔ سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو 10 روزہ ریمانڈ ختم ہونے کے بعد احتساب عدالت میں پیش کیا گیا۔ نیب کی جانب سے تفتیشی رپورٹ بھی عدالت میں پیش کر دی گئی۔ سابق وزیراعلیٰ شہباز شریف کا چودہ روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کر لیا گیا۔ احتساب عدالت نے نیب کو شہبازشریف کو 30 اکتوبر کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

 

نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ شہبازشریف نے بطور وزیراعلیٰ اختیارات کا ناجائز استعمال کیا۔ شہبازشریف کے ناجائزاقدامات سے 15ہزارغریب لوگ اپنے گھر سے محروم ہوئے۔ شہبازشریف کے وکیل نے کہا کہ شہباز شریف نے بطور وزیراعلیٰ کوئی غیر قانونی حکم جاری نہیں کیا۔

واضع رہے کہ نیب لاہور نے سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو 20 اگست کی صبح 11 بجے آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم میں بیان ریکارڈ کرنے کے لیے ذاتی حیثیت میں پیش ہونے کی ہدایت کی تھی۔ شہباز شریف کے خلاف آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم زیر تحقیقات جاری ہے، جس میں لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے سابق ڈائریکٹر جنرل احد چیمہ اور سابق وزیراعظم نواز شریف کے قریبی ساتھی اور سابق پرنسپل سیکریٹری فواد حسن فواد پہلے ہی گرفتار ہوچکے ہیں۔

 

ڈی جی نیب نے گزشتہ ماہ پانچ ہائی پروفائل کیسز کی تحقیقات مکمل کر کے چیئرمین نیب کو بھجوائیں۔ ذرائع کے مطابق آشیانہ اقبال سکینڈل، صاف پانی کمپنی سکینڈل، ایل ڈی اے سٹی سکینڈل، لاہور پارکنگ کمپنی سکینڈل اور پیراگون ہاؤسنگ سوسائٹی سکینڈل کی رپورٹس شامل کرتے ہوئے چیئرمین نیب نے ریجنل بورڈ میٹنگ میں گرفتاری کی منظوری دی۔

عطاء سبحانی  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں