کراچی: مضرصحت کھانا دو بچوں کی زندگیاں نگل گیا

کراچی (پبلک نیوز) شہر قائد کے علاقہ کلفٹن میں افسوسناک واقعہ پیش آیا جہاں نجی ریسٹورنٹ میں کھانا کھانے سے دو بچے جاں بحق ہوگئے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی میں ریسٹورانٹ کا مضرصحت کھانا دو بچوں کی زندگیاں نگل گیا۔ بچوں کی والدہ تشویشناک حالت میں ہسپتال میں زیرعلاج ہے۔ متاثرہ فیملی نے گذشتہ  شب کلفٹن میں واقع نجی ریسٹورانٹ میں کھانا کھایا۔ علی الصبح طبیعت بگڑنے پر انھیں اسپتال منتقل کیا گیا۔ لیکن  ڈیڑھ سالہ احمد اور 5 سالہ  محمد جانبر نہ ہوسکے۔

ايس ايس پی ساؤتھ پیر محمد شاہ کے مطابق گزشتہ رات متاثرہ خاندان کے بچوں نے پہلے ایک پلے لینڈ سے ٹافیاں، آئس کریم اور چپس کھائے۔ اس کے بعد ریسٹورانٹ میں کھانا کھایا۔ سندھ فوڈ اتھارٹی کی ٹیم جائے وقوعہ پر پہنچی۔ کھانے کے نمونے لے کر ریسٹورانٹ کو سیل کردیا۔ ڈائریکٹر آپریشن فوڈ اتھارٹی ابرار احمد شیخ کا کہنا تھا اس ریسٹورانٹ کو کچھ ہفتہ پہلے معیار میں بہتری لانے کا نوٹس مل چکا ہے۔ جس میں لکھا ہے کہ بچے ہوئے کھانے کو ضائع کرنا ہے۔

دوسری جانب آئی جی سندھ کلیم امام نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے ایس ایس پی ساؤتھ سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔

پبلک نیوز نے یہ خبر دی تو حکام کو ہوش آیا۔ سندھ فوڈ اتھارٹی کے ڈائریکٹر آپریشن ابرار احمد شیخ نے بتایا نجی ریسٹورانٹ کو کچھ ہفتہ قبل معیار میں بہتری لانے کا نوٹس مل چکا ہے۔ اگر ریسٹورانٹ کا معیار ٹھیک نہیں تھا، تو اس پر ایکشن کیوں نہیں لیا گیا؟ ابرار شیخ نے کہا کہ ریسٹورانٹ کے کچن میں کوئی ایگزاسٹ سسٹم بھی نہیں ہے۔ یہ قوانین کے خلاف ہے۔

کچھ ہفتہ پہلے نوٹس بھیجنے کے بعد دوبارہ اس جگہ کا جائزہ کیوں نہیں لیا گیا؟ ڈائریکٹر آپریشن نے کہا بہت بڑا واقعہ ہوا ہے۔ ہم اس کو ہلکا نہیں لیں گے۔ معاملے کی تہہ تک جائیں گے۔

جب آپ نے پہلے نوٹس بھیجا تھا تو اس وقت تحقیقات کیوں نہ ہوئیں۔ کھانے کے معیار کو چیک کرنے کے لیے تہہ تک کیوں نہ گئے۔ نوٹس ملنے کے باوجود وہ ریسٹورانٹ اتنے ہفتہ تک کام کیسے کرتا رہا۔

حارث افضل  9 ماه پہلے

متعلقہ خبریں