کراچی: سرکاری ہسپتال میں 22سالہ لڑکی زیادتی کے بعد قتل، 2 افراد گرفتار

کراچی(پبلک نیوز) کراچی کے ہسپتال یا قحبہ خانے؟ میڈیکل رپورٹ کے مطابق کورنگی کے سرکاری ہسپتال میں 22سالہ عصمت کی 2 لوگوں نے عصمت دری کی، عصمت کو موت کے 3 گھنٹے بعد ٹی بی وارڈ میں رکھا گیا اور بعد میں اہلخانہ کو اطلاع دی گئی۔ پولیس نے 2 افراد کو دھر لیا ایک کی تلاش جاری۔

 

کراچی کے علاقے کورنگی کے سرکاری ہسپتال میں غلط انجکشن لگانے سے 22 سالہ عصمت کی ہلاکت کا مقدمہ تو درج ہو گیا، لیکن میڈیکل رپورٹ نے ہسپتال انتظامیہ کا بھانڈا پھوڑ دیا۔ پبلک نیوزکو موصول ہونے والی میڈیکل رپورٹ کے مطابق 26 سالہ عصمت کو 2 لوگوں نے عصمت دری کا نشانہ بنایا، عصمت کی موت کے 3 گھنٹے بعد ٹی بی وارڈ میں رکھا گیا، وارڈ میں سے انجیکشن اور سرنج کو بھی غائب کر دیا گیا۔ عصمت کے والدین کو فون پر بتایا کہ ان کی بیٹی جناح ہسپتال میں زیرعلاج ہے۔

 

درج ایف آئی آر کے مطابق والدین ہسپتال پہنچیں تو عصمت کی لاش اسٹریچر پر موجود تھی، عصمت کے والد کا کہنا تھا کہ عصمت دانت کی تکلیف میں مبتلا تھی، ڈاکٹر نے چیک اپ کرنے کے بعد انجکشن لگایا، جس سے عصمت کی موت واقع ہوئی، مزید کہا! میرا مطالبہ ہے کہ تحقیقات کر کے انصاف فراہم کیا جائے۔ پولیس کے مطابق ٹی بی پروگرام میں کام کرنے والے 2 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے جبکہ تیسرے ملزم کی تلاش جاری ہے۔

عطاء سبحانی  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں