کام چاہے نہ کرو، تنخواہ ملتی رہے گی

 

پبلک نیوز: شیخوپورہ کے ڈی ایچ کیو اسپتال میں 69 ڈاکٹرز بغیر کام کیے کئی ماہ تنخواہ وصول کرتے رہے ہیں۔ 69 ڈاکٹروں نے بغیر کسی کام کے قومی خزانے کو 1 کروڑ 30 لاکھ 77 ہزار کا ٹیکہ لگایا ہے۔

 

تفصیلات کے مطابق شیخوپورہ کے ڈی ایچ کیو اسپتال میں 69 ڈاکٹرز بغیر کام کیے کئی ماہ تنخواہ وصول کرتے رہے۔ آڈٹ ڈیپارٹمنٹ کی جانب سے 20 اگست کو رپورٹ ایم ایس شیخوپورہ اسپتال کو دی گئی۔ ڈاکٹر حمزہ صدیقی نے آدٹ رپورٹ آنے کے بعد 35 لاکھ 45 ہزار 50 روپے قومی خزانے میں جمع کروا چکے۔

 

26 اگست کو ڈاکٹر حمزہ صدیقی نے ایم ایس کو خط لکھ کر رقم واپس کرنے کی یقین دہانی کروائی تھی۔ ایم ایس نے جواباً ڈاکٹر حمزہ صیدیقی کو قوم کا ہیرو بنا کر پیش کرنے کے لیے شکریہ کا خط لکھ ڈالا۔ اسپتال انتظامیہ کی جانب سے نوکری چھوڑ کر جانے والے ڈاکٹرز سمیت دیگرعملے کو کئی ماہ سے ادائیگیاں کی جا رہی تھیں۔

 

واضح رہے کہ ڈاکٹر حمزہ نے 14 جنوری 2016 سے اگست 2019 تک 35 لاکھ 45 ہزار 50 روپے وصول کیے۔ ڈاکٹر حمزہ 13 جنوری کو اسپتال سے فارغ ہوگئے تھے لیکن 3 سال 8 ماہ تنخواہ وصول کرتے رہے۔ ڈاکٹر شاہ زیب اختر نے 18 نومبر سے 30 اپریل 2019 تک 16 لاکھ 42 ہزار 952 روپے وصول کیے۔

 

ڈاکٹر شاہ زیب 17 نومبر 2017 کو اسپتال کو خیرباد کہہ کر جا چکے تھے لیکن 1 سال 5 ماہ تنخواہ وصول کرتے رہے۔ ڈاکٹر ہدا عائشہ نے ٹرانسفر ہونے کے بعد بھی 2 ماہ کی تنخواہ 1 لاکھ 83 ہزار 818 روپے وصول کی۔ ڈاکٹر حفظ حسیب کے اکاونٹ میں جنوری 2019 س جولائی 2019 تک 2 لاکھ 79 ہزار 735 روپے منتقل کیے گئے۔

 

ڈاکٹر سکینہ کنول کے اکاونٹ میں 4 ماہ کے دوران 3 لاکھ 48 ہزار 109 روپے منتقل کیے گئے۔ ڈاکٹر سیدہ شہلا کو 1 لاکھ 21 ہزار 532، ڈاکٹر شگفتہ ذوالفقار کو 1 لاکھ 73 ہزار 234 روپے دیے گیے۔ ڈاکٹر فائضہ مقبول کو 1 لاکھ 33 ہزار 125 روپے جبکہ عفہ قاسم کو 1 لاکھ 32 ہزار 466 روپے منتقل ہوئے۔

 

ڈاکٹر صبا اصغر کو 1 لاکھ 32 ہزار، ڈاکٹر سرفراز احمد کو 98 ہزار 259، ڈاکٹر امبرین شوکت کو 2 لاکھ 10 ہزار، ڈاکٹر ساجد 1 لاکھ 14 ہزار، ڈاکٹر امتیاز علی 1 لاکھ 46، ڈاکٹر راؤ تیمور کو 1 لاکھ 13 ہزار 983 روپے جبکہ ڈاکٹر حمزہ خرم کو 98 ہزار 259 روپے منتقل ہوئے۔

احمد علی کیف  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں