علی عمران یوسف کی جائیداد ضبط کی جائے، احتساب عدالت کا حکم

لاہور(پبلک نیوز) احتساب عدالت میں سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کے داماد عمران علی یوسف کی جائیداد ضبط کرنے کے خلاف سماعت، عدالت نے نیب کو علی عمران یوسف کی جائیداد ضبط کرنے کا حکم دے دیا۔

احتساب عدالت میں سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کے داماد عمران علی یوسف کی جائیداد ضبط کرنے کے خلاف کیس کی سماعت ہوئی، اختساب عدالت کے جج محمد اعظم نے نیب کی درخواست پر سماعت کی۔ نیب پراسیکیوٹر حافظ اسد اللہ نے عمران علی یوسف کی جائیداد کی تفصیلات بیان کرتے ہوئے کہا کہ عمران علی یوسف کی اربوں روپے مالیت کی جائیداد پاکستان میں ہے۔ علی سنٹر، علی ٹاون میں کڑوڑوں روپے مالیت کے دفاتر اور اپارمنٹ ہیں۔

 

نیب پراسیکیوٹر حافظ اسداللہ کا کہنا تھا کہ علی اینڈ فاطمہ ڈویلپر کے نام پر گلبرگ میں اربوں روپے مالیت کا پلازہ ہے۔ غوث الاعظم ڈویلپرز کے نام پر بھی کڑڑوں روپے کی جائیداد علی عمران کے نام ہے۔اے بلاک گلبرگ تھری میں99/100 میں کڑوڑوں روپے مالیت کا پلاٹ ہے۔ مدینہ فیڈز مل بھی علی عمران یوسف کی ملکیت میں ہے۔

 

نیب پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ علی پروسیڈ فوڈز پرائیویٹ لمیٹڈ بھی وزیراعلیٰ پنجاب کے داماد کی ملکیت میں ہے۔ عمران علی یوسف پر پنجاب پاور ڈویلپمنٹ کمپنی کے سی ایف او نوید اکرام سے 13کڑور رشوت لینے کا الزام ہے۔ تحقیقات کے لیے نیب میں طلب کیا گیا عمران علی یوسف طلب کیے جانے کے باجود پیش نہیں ہوئے۔

 

نیب کی جانب سے شہباز شریف کے داماد عمران علی یوسف کے وارنِٹ گرفتاری جاری ہوئے تاہم ملزم بیرون ملک فرا ہو چکا ہے۔ پراسیکیوٹر نے استدعا کی کہ عدالت شہباز شریف کے داماد کو اشتہاری قرار دینے اور جائیدادیں ضبط کرنے کا حکم دے۔ جس پر عدالت نے نیب کو علی عمران یوسف کو جائیداد ضبط کرنے کا حکم دے دیا۔

عطاء سبحانی  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں