خورشید شاہ 21 ستمبر تک راہداری ریمانڈ پر نیب کے حوالے

 

اسلام آباد (پبلک نیوز) اسلام آباد کی احتساب عدالت نے خورشید شاہ کو 21 ستمبر تک راہداری ریمانڈ پر نیب کے حوالے کر دیا۔۔ پیپلزپارٹی کے سینئر رہنما کو آمدن سے زائد اثاثوں کے الزام میں گزشتہ روز اسلام آباد سے گرفتار کیا گیا تھا، خورشید شاہ کو سکھر کی احستاب عدالت پیش کر کے جسمانی ریمانڈ لیا جائے گا۔

 

تفصیلات کے مطابق آمدن سے زائد اثاثوں کے کیس میں گرفتار پیپلزپارٹی کے سینئر رہنما خورشید شاہ کو اسلام آباد کی احتساب عدالت پیش کیا گیا۔ نیب نے خورشید شاہ کے 7 روزہ راہداری ریمانڈ کی استدعا کی جس پر عدالت نے استفسار کیا کہ 7 روزہ راہداری ریمانڈ کا کیا کریں گے۔

 

نیب ٹیم کا جواب میں کہنا تھا کہ آج صبح 9 بجےاسلام آباد سے سکھر کی پرواز کے ذریعے خورشید شاہ کو نہیں بھیج سکے۔ کسی بھی اگلی دستیاب فلائٹ پر انھیں سکھر بھجوا دیں گے۔ احتساب عدالت نے خورشید شاہ کا 2 روزہ راہداری ریمانڈ منظور کرتے ہوئے انہیں 21 ستمبر تک سکھر کی متعلقہ عدالت میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

 

پیشی کے وقت میڈٰیا سے گفتگو کرتے ہوئے خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ ان پر لگنے والے الزامات جھوٹ کا پلندہ ہیں۔ ساری زندگی کرپشن کے خلاف جدوجہد کی۔ ظاہر شدہ جائیداد سے ایک انچ جائیداد بھی زیادہ نہیں۔

 

واضح رہے کہ سابق اپوزیشن لیڈر اور پیپلزپارٹی کے رہنما خورشید شاہ کیخلاف ان کے بینک اکاؤنٹس اور بے نامی جائیدادوں کی تحقیقات کی جا رہی تھی۔ نیب ذرائع کے مطابق خورشید شاہ نے اپنے فرنٹ مین کے ناموں پر درجنوں جائیدادیں بنا رکھی ہیں۔

احمد علی کیف  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں