افغان امن مذاکرات: طالبان کاآئندہ انتخابات میں نگران سیٹ اپ کی سربراہی کا مطالبہ

ابو ظہبی (پبلک نیوز) متحدہ عرب امارات میں امریکا اورطالبان مذاکرات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔ طالبان نے آئندہ انتخابات میں شرکت کے لیے نگران سیٹ اپ کی سربراہی مانگ لی۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ابوظہبی مذاکرات میں پاکستان نے اہم کردار ادا کیا۔

افغانستان میں قیام امن کےلیے متحدہ عرب امارات میں طالبان کے ساتھ امن مذاکرات جاری ہیں۔ افغان حکومت کا ایک اعلیٰ سطح امن مذاکراتی وفد بھی ابوظہبی پہنچ گیا۔ عبدالسلام رحیمی کی قیادت میں وفد طالبان کے ساتھ مذاکرات میں شرکت کرے گا۔ طالبان نے اس سے پہلے افغان حکومت کے ساتھ مذاکرات سے انکار کیا تھا۔

مذاکرات میں طالبان نے افغانستان میں نگران سیٹ اپ میں شرکت کے لیے سیٹ اپ کی سربراہی کے عہدہ کی شرط رکھ لی۔ آئندہ سال اپریل میں الیکشن متوقع ہیں۔ طالبان نے سعودی عرب، پاکستان اور متحدہ عرب امارات سے مذاکرات کی گارنٹی مانگ لی۔ طالبان نے زلمے خلیل زاد سے افغانستان سے غیر ملکی افواج کے انخلا اور ممکنہ جنگ بندی پربات چیت کی۔

وزیراعظم پاکستان عمران خان نے کہا کہ ابوظہبی میں طالبان اور امریکا کے درمیان مذاکرات میں پاکستان نے مدد کی۔ دعا گو ہیں کہ ان مذاکرات سے امن کی راہ ہموار ہو اور 30 سال سے جاری افغانستان کے لوگوں کی مشکلات ختم ہوں۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان اس امن عمل کو جاری رکھنے کے لیے سب کچھ کرے گا۔

اقوام متحدہ کے نمائندہ برائے افغانستان تادامیچی یاماموتو نے کہا کہ افغانستان میں جنگ کے خاتمہ کا امکان پہلے سے زیادہ بڑھ گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مذاکرات میں اس سے پہلے کبھی پیش رفت نہیں ہوئی۔ تادامیچی نےکہا کہ خطے کے تمام ممالک امن مذاکرات میں اپنا کردارادا کریں۔

احمد علی کیف  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں