پاکستان کو گرے سے بلیک لسٹ میں دھکیلنے کی تمام بھارتی چالیں ناکام

اسلام آباد(پبلک نیوز) پاکستان کے حوالے سے بھارت کو ہمیشہ خفت و ندامت اٹھانا پڑی، فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے ممالک پاکستانی اقدامات کو سراہنے لگے۔ پاکستان نے ترکی، چین اور ملائیشیا کی حمایت حاصل کر لی، پاکستان نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے بیشتر اہداف حاصل کر لئے ہیں۔

 

پاکستان کو گرے سے بلیک لسٹ میں دھکیلنے کی تمام بھارتی چالیں ناکام ہو گئیں، عسکری ہو یا سفارتی یا کوئی اور محاذ، پاکستان کے حوالے سے بھارت کو ہمیشہ خفت و ندامت اُٹھانا پڑی۔ ایک بار پھر پاکستان کو بلیک لسٹ کرنے کیلئے بھارتی لابی کے تمام حربے ناکام ہو گئے۔ پاکستان نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کی بلیک لسٹ سے بچنے کے لیے 3 اہم ممالک کا تعاون حاصل کر لیا۔ کامیاب سفارتی کوششوں کے نتیجے میں پاکستان نے ترکی، چین اور ملائیشیا کی حمایت حاصل کر لی، جس کے بعد پاکستان کو بلیک لسٹ میں ڈالنے کے امکانات معدوم ہو گئے۔

 

رواں ماہ کی 17 تاریخ کو امریکی ریاست فلوریڈا میں پاکستان کے بارے میں فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا اجلاس تھا۔ ذرائع کے مطابق ایف اے ٹی ایف کو جعلی بینک اکاؤنٹس، مشکوک ترسیلات کیخلاف پاکستانی اقدامات پر بریفنگ دی گئی۔ اس کے علاوہ کالعدم تنظیموں کے خلاف نیکٹا کی کارروائی پر بھی بریفنگ دی گئی۔ بریفنگ میں بتایا گیا کہ پاکستان نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے بیشتر اہداف حاصل کر لئے ہیں۔

 

دہشت گرد تنظیموں کو کالعدم قرار دیا گیا اور ان کی فنڈنگ بند ہو گئی۔ کرنسی سمگلنگ بھی روک دی گئی ہے۔ اب پاکستان میں منی لانڈرنگ کا ہونا ممکن نہیں۔ فنانشنل ایکشن ٹاسک فورس کی جانب سے پاکستان کو بلیک لسٹ میں ڈالنے یا نہ ڈالنے سے متعلق حتمی اعلان اکتوبر میں کیا جائے گا۔ 36 مالک پر مشتمل ایف اے ٹی ایف کے چارٹر کے مطابق کسی بھی ملک کا نام بلیک لسٹ میں نہ ڈالنے کے لیے تین ممالک کی حمایت لازم ہے۔

عطاء سبحانی  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں