سابق پنجاب حکومت کا ایک اور منصوبہ ناقص حکمت عملی کے باعث گھٹائی میں پڑ گیا

لاہور(پبلک نیوز) سابق پنجاب حکومت کا ایک اور منصوبہ غفلت اور ناقص حکمت عملی کے باعث کھٹائی میں پڑ گیا۔ ایک ہزار ڈومیسٹک ورکرز کو تربیت دینے کے لیے خزانے سے ایک کروڑ 34 لاکھ روپے سے زائد رقم خرچ ہوئی۔

 

سابق وزیراعلی شہباز شریف کے دور حکومت میں ڈومیسٹک ورکرز کو خود مختار بنانے کا منصوبہ ناقص حکمت عملی اور مبینہ غفلت کی بھینٹ چڑھ گیا۔ ناقص پلاننگ اور مبینہ غفلت کے باعث منصوبہ بروقت مکمل نہیں ہوسکا۔موجودہ صوبائی حکومت کی رپورٹ میں منصوبے کو ناکام قرار دے دیا گیا۔ ڈائریکٹر جنرل مانیٹرنگ اینڈ ایولویشن ٹیم نے ٹریننگ آف 1000 ڈومیسٹک ورکر پروگرام کو ناکام قرار دے دیا ہے۔

 

موجودہ پنجاب حکومت کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ منصوبے پر مقررہ رقم سے زیادہ خرچ کیا گیا، جبکہ منصوبہ بھی بروقت مکمل نہیں ہو سکا، جس کے باعث منصوبے کی افادیت ختم ہو گئی اور ٹریننگ کرنے والوں کو خاطر خواہ نتائج نہیں مل سکے۔ پنجاب حکومت کی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ انٹرنیشنل لیبر آرگنائزیشن اور اے ڈی پی کے فنڈز کہاں خرچ ہوئے تفصیلات فراہم نہیں کی گئی۔ ویمن ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ نے جو ٹریننگ دی اسکا امتحان نہیں لیا گیا، رپورٹ میں تجویز دی گئی ہے کہ ویمن ڈپارٹمنٹ سے منصوبے پر خرچ رقم سے متعلق وضاحت طلب کرتے ہوئے ذمہ داران کا تعین کیا جائے۔

 

عطاء سبحانی  2 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں