اپوزیشن کا حکومت کیخلاف قرارداد پارلیمینٹ کی بجائے اے پی سی میں پیش کرنے کا فیصلہ

پبلک نیوز: آل پارٹیز کانفرنس میں حکومت کے خلاف قرارداد پارلیمینٹ کی بجائے کانفرنس میں پیش کرنے کا فیصلہ، ملک گیر احتجاج کی تجویز بھی اے پی سی کے ایجنڈے میں شامل کی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق مولانا فضل الرحمان اور آصف علی زرداری کے درمیان ملاقات میں اس بات پر اتفاق کیا گیا تھا کہ آل پارٹیز کانفرنس بلا کر حکومت کے خلاف قرارداد پارلیمنٹ میں پیش کرنے پر مشاورت کی جائے گی۔ تاہم متحدہ اپوزیشن حکومت کے خلاف قرارداد پارلیمنٹ میں لانے پر متفق نہیں ہو سکی۔

ذرائع کے مطابق حکومت کے خلاف قرارداد پارلیمنٹ کی بجائے اے پی سی میں پیش کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔ متحدہ اپوزیشن کی آل پارٹیز کانفرنس میں ملک گیر احتجاج کی تجویز بھی پیش کی جائے گی۔

متحدہ اپوزیشن کی اے پی سی کی میزبانی مولانا فضل الرحمان کریں گے۔ متحدہ اپوزیشن کی اے پی سی میں پی ٹی آئی کے علاوہ تمام جماعتوں کو شرکت کی دعوت دی جائے گی۔ذرائع کے مطابق اے پی سی میں شرکت کے لئے دعوت ناموں کی ترسیل کا مرحلہ مکمل ہو گیا۔

اے پی سی میں سیاسی قائدین کی شرکت کے حوالے سے بھی سیاسی جماعتوں کی اپنی پارٹیوں میں مشاورت جاری ہے۔ ذرائع کے مطابق میاں نواز شریف کی شرکت کی صورت میں آصف علی زرداری شرکت کرینگے۔ جبکہ راجہ ظفر الحق کی شرکت کی صورت میں بلال بھٹو زرداری شرکت کریں گے۔

دیگر رہنماﺅں میں اسفندیار ولی خان، میر حاصل بزنجو، محمود خان اچکزئی، میاں افتحار حسین، ڈاکٹر محمد مالک اور اختر مینگل کے علاوہ دیگر رہنما شرکت کریں گے۔ اپوزیشن کی آل پارٹیر کانفرنس اسلام آباد میں 31 اکتوبر کو اسلام آباد میں منعقد کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

احمد علی کیف  4 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں