پاکستان کا آئین 45 برس کا ہو گیا

اسلام آبد(رمیشہ قریشی) پاکستان کا آئین آج 45 برس کا ہو گیا، دس اپریل 1973 کے آئین کی منظوری کا دن آج ملک بھر میں منایا جا رہا ہے، جسے یوم دستور بھی کہا جاتا ہے، چودہ اگست 1973 کو ملک بھر میں نئے آئین کا نفاذ کر دیا گیا۔

 

پاکستان کی دستور ساز اسمبلی نے 10 اپریل 1973 کو متفقہ آئین کی منظوری دی، جسے دو روز بعد 12 اپریل 1973 کو صدارتی منظوری ملی، اسی مناسبت سے آج پاکستان بھر میں آئین کی منظوری کا دن منایا جا رہا ہے، جسے یوم دستور بھی کہا جاتا ہے۔ پاکستان کے موجودہ آئین کو تہتر کا آئین کہا جاتا ہے۔1971 میں مشرقی پاکستان کی علیحدگی کے بعد70 کے انتخابات کی بنیاد پر1972 میں اسمبلی بنائی گئی، جس میں نئے آئین کیلئے کمیٹی کا قیام عمل میں لایا گیا، جس کا مقصد ایک متفقہ آئین بنانا تھا۔

 

کمیٹی نے دس اپریل1973 کو قومی اسمبلی میں آئین کا مسودہ پیش کیا، جسے وفاقی اسمبلی نے ایک سو پینتیس ووٹوں کے ساتھ منظور کر لیا، بارہ اگست کو صدر نے آئین پر دستخط کیئے اور چودہ اگست 1973 کو ملک بھر میں نئے آئین کا نفاذ کر دیا گیا۔ آئین کے مطابق ملک میں پارلیمانی نظام حکومت ہو گا جس کے سربراہ وزیراعظم ہوں گے۔ پاکستان کا سرکاری مذہب اسلام ہو گا، ترامیم کی بات کی جائے تو تہتر کے آئین میں اب تک پچیس ترامیم کی جا چکی ہیں۔

 

آئین میں پچیسویں ترمیم 31 مئی 2018ء کو کی گئی جس میں فاٹا کو خیبر پختونخواہ میں ضم کرنے کے لئے صدر مملکت پاکستان نے دستخط کیے۔ پاکستان کا آئین ریاست کے ہر شہری کو بنیادی حقوق جمہوریت اور سیکورٹی کی ضمانت دیتا ہے، اس کے تقدس کو برقرار رکھنا ہم سب کی اولین ذمہ داری ہے۔

عطاء سبحانی  5 ماه پہلے

متعلقہ خبریں