معیشت کو اپنے پاؤں پر کھڑا کرنا اولین ترجیح ہے: اسد عمر

لاہور(پبلک نیوز) وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف سے قرضہ لینے کے معاملات آخری مراحل میں داخل ہو گئے ہیں، ریونیو ٹارگٹ کو پورا کریں گے۔ ستمبر میں چار ہزار تین سو اٹھانوے ارب کا ٹارگٹ دیا جو پورا ہونے جا رہا ہے۔

 

اسد عمر نے لاہور چیمبر میں تاجروں اور میڈیا سے گفتگومیں کہا کہ اس وقت معیشت کو اپنے پاؤں پر کھڑا کرنا اولین ترجیح ہے پرائیویٹ سیکٹر کو ہمارے ساتھ نیک نیتی سے مل کر چلنا ہو گا۔ ٹیکس ضرور دیں۔ اس کے بغیر ملک نہیں چلا کرتے۔ کوشش ہے کہ ایف بی آر کا ڈھانچہ درست کریں تاکہ ہر سیکٹرکے تحفظات کا خاتمہ ہو سکے۔

 

اسد عمر نے تاجروں کی طرف سے ہونے والی تنقید کا خیر مقدم کیا اور کہا کہ حالیہ اصلاحاتی ترمیمی بل دراصل تاجر صنعتکار اور عام آدمی کے لئے یکساں مفید ہے۔ راتوں رات سالوں کی خرابیاں دور نہیں ہو سکتیں، تاہم غریب کے لئے غربت کم کرنا عمران خان کی ترجیح ہے۔ بدتر معیشت ہمیں وراثت میں ملی اس کو ٹھیک کرنے کے ساتھ اداروں کی بحالی اولین ترجیح ہے۔

 

وزیر خزانہ اسد عمر نے تاجروں کو بجلی گیس اور ٹیکسز کے حوالے سے بلند شرح میں وقت کے ساتھ کمی کا یقین دلایا اور ان سے مطالبہ کیا کہ تنقید اور بلا جواز خوفزدہ ہونے کی ضرورت نہیں سرمایہ کاری کریں۔ حکومت انہیں ہر طرح کا تحفظ دے گی۔ اسد عمر کا کہنا تھا کہ ذرِ مبادلہ کے ذخائر کو بڑھانے کےلئے سمندر پاکستانیوں کے لئے سرمایہ کاری سرٹیفکیٹ کا اجرا کریں گے، جس کا افتتاح عمران خان کریں گے۔ تقریب سے حماد اظہر نے بھی خطاب کیا۔

عطاء سبحانی  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں