پارک لین کمپنی کیس: زرداری، بلاول نے نیب جے آئی ٹی کے سامنے بیان ریکارڈ کرادیا

اسلام آباد (پبلک نیوز) جعلی اکاؤنٹس کیس میں آصف علی زرداری اور ان کے بیٹے پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری سے نیب نے آج کی تفتیش مکمل کر لی جس کے دوران ان کو سوالنامہ دیا گیا۔ نیب ٹیم نے دونوں رہنماؤں کا بیان ریکارڈ کرنے کے بعد واپس جانے کی اجازت دے دی۔

 

تفصیلات کے مطابق سابق صدر آصف زرداری کو دیا گیا سوالنامہ 50 سے زائد سوالات پر مشتمل ہے۔ نیب آفس میں آصف زرداری کا بیان قلمبند کر لیا گیا۔ ذرائع کے مطابق تفتیش کے دوران آڈیوو یڈیو ریکارڈنگ بھی کی گئی۔ آصف زرداری، بلاول کو تحریری جواب کے لیے مزید وقت دیا جائے گا۔ اس موقع پر آصفہ بھٹو سمیت دیگر مرکزی قیادت کو ہال میں بٹھایا گیا۔ آصف زرداری نیب آفس سے باہر آگئے جبکہ بلاول سے 5 رکنی نیب ٹیم نے پوچھ گچھ کی اور ان کو بھی سوال نامہ دیا گیا ہے۔

 

ذرائع کے مطابق چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے جعلی اکاونٹس کیس سے لا تعلقی کا اظہار کر دیا۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا ان کیسز سے میرا کوئی تعلق نہیں، سمجھ نہیں کہ مجھے ان کیسز میں کیوں شامل کیا گیا۔ جب پارک لین کمپنی قائم ہوئی تو میری عمر ایک سال تھی، کبھی کرپشن کی حمایت نہیں کی، نیب کو حقائق کو مد نظر رکھنا چاہیے۔

 

نیب پیشی کے موقع پر آصفہ بھٹو بھی چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو کے ہمراہ تھی۔ سابق صدر آصف علی زرداری اور بلاول بھٹو 19 گاڑیوں کے قافلے میں نیب ہیڈکوارٹرز پہنچے۔ اس موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے۔

 

پیشی سے پہلے بلاول بھٹو نے حبیب جالب کے اشعار میں اپنے خیالات کا اظہار کیا ان کا کہنا تھا کہ "میں بھی خائف نہیں تختہ دار سے، میں بھی منصور ہوں کہہ دو اغیار سے، کیوں ڈراتے ہو زنداں کی دیوار سے، ظلم کی بات کو جہل کی رات کو، میں نہیں مانتا میں نہیں جانتا۔"

 

پی پی قیادت کی پیشی کے موقع پر اسلام آباد کا نادرا چوک میدان جنگ بن گیا، پیپلز پارٹی کارکنان اور پولیس میں ہاتھا پائی کے دوران 3 اہلکار زخمی جبکہ کئی جیالوں کو حراست میں لے لیا گیا۔

حارث افضل  1 ماه پہلے

متعلقہ خبریں