بلیک میل کا سلسلہ جاری رکھا تو نتائج کی ذمہ دار حکومت ہوگی: بلاول بھٹو

اسلام آباد (پبلک نیوز) چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ نیب مشرف کے دور میں بنی، اس لیے بنائی گئی کہ سیاسی جماعتوں کو توڑا جا سکے، ہر پاکستان کے لیے ایک ہی قانون بنایا جائے، جب تک قانون برابر نہیں ہوگا تب تک کرپشن پر قابو نہیں پایا جا سکتا۔

 

شہر اقتدار میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ حکومت کے غیر جمہوریت رویہ کی شدید مذمت کرتے ہیں۔ پیپلزپارٹی ورکرز کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔ پیپلزپارٹی ورکروں کی رہائی کا مطالبہ کرتا ہوں۔ میں نے کسی احتجاج کی کال نہیں دی تھی۔ مجھے اپنا نوٹس پیر کے دوپہر کو ملا تھا۔ جب ظلم ہوتا ہے تو پیپلزپارٹی کے کارکن ظلم کے خلاف آواز اٹھاتے ہیں۔

 

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی کے کارکنوں اظہار یکجہتی کے لیے جمع ہوئے تھے۔ اس پارٹی کی حکومت نے دو ماہ اسلام آباد کو بند کرکے رکھا تھا، غیر جمہوری، آمرانہ رویہ کی شدید مذمت کرتا ہوں۔ جب جمہوریت پسند کارکنان آواز اٹھاتے ہیں تو ظلم کیا جاتا ہے۔ پیپلزپارٹی کا نیب کے ساتھ ایک تاریخ ہے۔ جو لوگ نیب سے خوش تھے وہ بھی ان کے شکار بن گئے۔

 

ان کا کہنا تھا کہ میں مطالبہ کر رہا ہوں کہ نیشنل سکیورٹی کمیٹی بنایا جائے۔ میں مطالبہ کر رہا ہوں کہ حکومت کے 3 وزراء کے کلعدم تنظیموں کے ساتھ رابطے ہیں۔ وزیر نے کہا ہے کہ جب تک تحریک انصاف حکومت ہے تب تک کلعدم تنظیموں کے خلاف آپریشن نہیں ہوگا۔ بلاول بھٹو زرداری کیس کا تعلق کراچی سے ہے۔ جعلی بینک اکائونٹس نیب کا بنتا ہی نہیں، بینکنگ کورٹ مناسب فورم ہے۔

 

 انہوں نے مزید کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ ہر بار نیب کو استعمال کیا جاتا ہے۔ نیب مشرف کے دور میں بنی، اس لیے بنائی گئی کہ سیاسی جماعتوں کو توڑا جا سکے۔ ہر پاکستان کے لیے ایک ہی قانون بنایا جائے۔ جب تک قانون برابر نہیں ہوگا تب تک کرپشن پر قابو نہیں پایا جا سکتا۔ جہاں جہاں قانون کی پیروی نہیں ہورہی وہاں احتجاج ضرور کریں گے۔ اگر حکومت نے ہمارے کارکنوں کو رہا نہیں کیا تو ہمیں اقدام اٹھانے آتے ہیں۔ میرے دھوبی اور کھانے پر جے آئی ٹی بنائی گئی۔ اگر ہمت ہے تو کلعدم تنظیموں کے سربراہاں کے اوپر جے آئی ٹی بننے چاہیے۔ یہ حکومت تنقید کو برداشت نہیں کرسکتی، اگر حکومت نے بلیک مل کا سلسلہ جاری رکھا تو نتائج کی ذمہ دار حکومت ہوگی۔

حارث افضل  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں