بلاول بھٹو نے اپوزیشن جماعتوں کے قائدین کو افطار ڈنر پر مدعو کر لیا

اسلام آباد(پبلک نیوز) ملکی سیاسی صورت حال اور معاشی بحران پر اپوزیشن کی مشترکا حکمت عملی کیا ہو گی؟ حکومت کے خلاف احتجاجی تحریک کیسے چلائی جائے گی؟ اس حوالے سے اپوزیشن کی پہلی مشاورت اتوار کو زرداری ہاؤس اسلام آباد میں ہونے جارہی ہے۔ پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اپوزیشن جماعتوں کے قائدین کو افطار ڈنر پر مدعو کر لیا۔

 

اپوزیشن کے گرینڈ الائنس کی تیاریاں، چیئرمین پیپلزپارٹی نے مریم نواز کو ٹیلی فون کر کے افطار ڈنر میں شرکت کی دعوت دے دی۔ مریم نواز نے دعوت قبول کر لی۔ مسلم لیگ ن کی قیادت کئی سال بعد زرداری ہاؤس میں کسی اجلاس میں شرکت کرے گی۔ ترجمان ن لیگ کے مطابق مریم نواز کی سربراہی میں مسلم لیگ ن کا وفد افطار ڈنر میں شرکت کرے گا۔ وفد میں حمزہ شہباز اور دیگر سینیئر رہنماء بھی شامل ہوں گے۔

بلاول بھٹو نے مولانا فضل الرحمان اور اسفند یار ولی سے بھی خود رابطہ کیا، محمود اچکزئی، اختر مینگل اور سراج الحق کو بھی فون کر کے افطار ڈنر کی دعوت دی۔ سراج الحق بیرون ملک دورے کے باعث شرکت نہیں کریں گے تاہم جماعت اسلامی کا وفد پی پی کے افطار میں جائے گا۔ بلاول بھٹو نے آفتاب شیر پاؤ اور اویس شاہ نورانی کو بھی بلا لیا، گرینڈ افطار کل زرداری ہاؤس اسلام آباد میں ہو گا۔ اپوزیشن کی اس بڑی بیٹھک میں ممکنہ عوامی احتجاجی تحریک پر مشاورت ہو گی۔

 

ذرائع کے مطابق اپوزیشن کو ایک پیج پر لانے میں چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔ اتوار کو ہونے والا افطار ڈنر ممکنہ عوامی احتجاجی تحریک کے پیش نظر اہم موڑ ثابت ہو سکتا ہے۔ دوسری جانب گزشتہ رات آصف زرداری بھی مولانا فضل الرحمان کی رہائش گاہ پہنچے۔ ذرائع کے مطابق دونوں رہنماؤں کے درمیان حکومت کے خلاف میدان میں آنے کی تیاریاں تیز کرنے پر اتفاق کیا۔ حکومت مخالف تمام سیاسی قوتوں کو یکجا کیا جائے گا۔ عید کے بعد اسلام آباد کی طرف مارچ کی حکمت عملی پر غور کیا جائے گا۔

عطاء سبحانی  1 روز پہلے

متعلقہ خبریں