پاکستان میں بریسٹ کینسر کی تشخیص کیلئے ڈیوائس متعارف

اسلام آباد (رمیشہ قریشی) پاکستان میں بریسٹ کینسر کی بروقت نشاندہی اور گھر بیٹھے تشخیص اب ممکن ہے۔ اسلام آباد کے ہونہار طلبا نے بریسٹ کینسر کی بروقت نشاندہی کے مسئلے کا حل ڈھونڈ لیا۔

 

ماہرین کے مطابق پاکستان میں ہر سال 83 ہزار بریسٹ کینسر کے کیسز سامنے آتے ہیں جس کی بڑی وجہ اس مرض کی وقت پر نشاندہی نہ ہونا ہے۔ اسی بات کو مد نظر رکھتے ہوئے اسلام آباد کی نجی یونیورسٹی کے تین ہونہار طلبا نے جدید ٹیکنالوجی سے لیس ایک ایسی شیپ وئیر ڈیوائس تیار کی ہے جس کے زریعے بریسٹ کینسر کی بروقت نشاندہی ممکن بنائی جا سکتی ہے۔

 

ڈیوائس میں نصب کیے گئے خصوصی سینسر چھپے ہوئے ٹیومر کو پہچاننے کی اہلیت رکھتے ہیں۔ یہ ڈیوائس کو کوئی بھی پیرا میڈیکل اسٹاف کا شخص یا عام فرد بھی چلا سکتا ہے، نشاندہی کا طریقہ کار آسان بنانے کا مقصد یہ ہے کہ یہ ڈیوائس دیہی اور پسماندہ علاقوں کی خواتین کے بھی کام آئے۔

 

ان ہونہار طالب علموں کی حکومت اور ڈاکٹرز سے گزارش ہے کہ یہ پاکستان میں بننے والی اپنی نوعیت کی پہلی ڈیوائس ہے اسے استعمال میں لایا جائے اور خواتین کو بریسٹ کینسر جیسے مرض کی بروقت تشخیص کا موقع دیا جائے۔

حارث افضل  2 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں