قوم کے اربوں روپے لوٹنے والوں کو حساب دینا ہو گا: چیف جسٹس

مانچسٹر (پبلک نیوز) چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے کہا ہے کہ قوم کے اربوں روپے لوٹ کر باہر بھیجنے والوں کو حساب دینا پڑے گا۔ لوٹی دولت واپس آئے گی تو ڈیم کے لیے چندے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار مانچسٹر میں ڈیم فنڈز ریزنگ تقریب میں شرکت کے لیے پہنچے تو پرتپاک استقبال کیا گیا۔ پاکستان اور مقامی کمیونٹی سمیت بڑی تعداد میں شرکا تقریب میں موجود تھے۔ معروف قانون دان نعیم بخاری اور چیف جسٹس کی  بے تکلفی بھی دیکھنے میں آئی۔ اسٹیج پر جاتے ہوئے چیف جسٹس نعیم بخاری کو تقریب میں دیکھ کر رک گئے اور خوب گرمجوشی سے بگل گیر ہوئے۔

تقریب سے خطاب میں چیف جسٹس نے کہا کہ کالاباغ ڈیم پراتفاق رائے نہ ہونے پر بھاشا دیامر اور مہمند ڈیم کی تعمیر کا فیصلہ کیا۔ سب کو معلوم تھا کہ پاکستان میں پانی کا بحران آنا ہے۔ بدقسمتی سے ہم نے پانی کی قدر نہیں کی۔

چیف جسٹس نے کہا کہ لانچ پر پیسے باہر بھیجنے والوں کو حساب دینا پڑے گا۔ کس نے کتنی جائیدادیں بنائیں سب حساب لیا جائے گا۔ تقریب کے بعد میڈیا سے گفتگو میں چیف جسٹس نے کہا کہ معلوم نہیں ان کے بعد آنے والے چیف جسٹس اس مشن کو لے کر چلیں گے یا نہیں، لیکن ڈیمز پاکستان کی ضرورت ہیں اور پاکستان کے شہری خود ڈیمز بنوائیں گے۔

چیف جسٹس نے پانی کا ضیاع روکنے کے لیے اقدامات پر پبلک نیوز کے سوال کو سراہتے ہوئے کہا کہ ڈیمز بنانے کے ساتھ ساتھ پانی کا ضیاع روکنا بھی ناگزیز ہے۔

چیف جسٹس نے ڈیم فنڈ میں مزید 2 لاکھ روپے دینے کا اعلان کیا۔ برطانیہ کی معروف کاروباری شخصیت انیل مسرت نے ڈیم فنڈز میں 10 کروڑ روپے سے زائد رقم عطیہ کی۔

حارث افضل  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں