قوم کے 14ارب میں سے 11 ارب کی چینی غائب کر دی: چیف جسٹس

کراچی (پبلک نیوز) اومنی گروپ کی شوگر ملز میں منجمد چینی کے اسٹاک غائب ہونے پر چیف جسٹس برہم ہو گئے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ قوم کے اثاثوں کے 14ارب میں سے 11 ارب کی چینی غائب کر دی گئی۔ کہاں تھی ایف آئی اے؟ اور کہاں تھی پولیس؟

تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس اومنی گروپ کی شوگر ملز میں منجمند چینی کے اسٹاک غائب ہونے پر برہم ہو گئے ریمارکس دیئے کہ قوم کے اثاثوں میں 14 ارب میں سے 11 ارب کی چینی غائب کر دی گئی۔ کہاں تھی ایف آئی اے؟ کہاں تھی پولیس؟ کن ٹرکوں پر مال ڈال کر غائب کیا، کون کون شامل تھا؟

ڈی جی ایف آئی اے نے بتایا کہ جن ملز سے اسٹاک غائب ہوا، بیشتر اومنی گروپ کی ہیں، اومنی گروپ کے خلاف 9 مقدمات درج کر لیے گئے۔ چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کون کون سی شوگر ملز شامل ہیں؟ ڈی جی ایف اے نے بتایا کہ نوڈیرو شوگر مل، باندھی شوگر، کھوسکی شوگر، انصاری شوگر، ٹنڈو الہ یار شوگر مل، باوانی شوگر مل، نیو دادو شوگر، لارڈ شوگر مل اور چمڑ شوگر مل شامل ہیں۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ان شوگر ملز کے دفاتر کہاں ہے۔ ذمہ داروں کو بلایا جائے، ڈی ایف آئی اے نے بتایا کہ  اومنی گروپ کے کچھ دفاتر کراچی اور کچھ اندرون سندھ میں ہیں۔ ڈی جی ایف آئی اے نے بتایا کہ چینی غائب ہونے میں انور مجید شامل ہوسکتے ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا وہ جیل میں ہیں، جیل جا کر ان سے تحقیقات کریں۔

عدالت نے اومنی گروپ کے چیف ایگزیکٹو اور دیگر حکام کو طلب کر لیا۔ ریمارکس دیئے کہ کوئی عدالت اومنی گروپ کی درخواست پر فیصلہ نہیں دے گی، اس کے سارے معاملات سپریم کورٹ دیکھے گی۔

حارث افضل  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں