ورلڈ کپ سے پہلے پاکستان کرکٹ بورڈ میں بغاوت ہو گئی

لاہور (پبلک نیوز) پاکستان کرکٹ بورڈ میں بغاوت۔ حکام اور بورڈ آمنے سامنے آ گئے۔ گورنگ باڈی کے پانچ ارکان نے ایم ڈی وسیم خان کی تقرری مسترد کر دی۔ چیئرمین پی سی بی نے کہا ایم ڈی کی تعیناتی بورڈ آف گورنرز کا فیصلہ تھا۔ غلط فہمی دور کر لیں، کرکٹ میں اصلاحات کوئی نہیں روک سکتا۔ باغی گروپ کے نعمان بٹ نے کہا احسان مانی دھمکیاں نہ دیں سچ بولیں پی سی بی کے آئین میں ایم ڈی کی کوئی گنجائش نہیں۔

 

پاکستان کرکٹ بورڈ میں بغاوت سامنے آگئی، پاکستان کرکٹ بورڈ کی گورننگ باڈی کے کوئٹہ میں ہونے والے اجلاس میں سات میں سے پانچ ممبرز نے نئے ایم ڈی وسیم خان کی تقرری کے خلاف قرارداد پیش کر دی۔ نعمان بٹ، شاہ ریز روکڑی، کبیر خان، شاہ دوست اور ایاز خان نے بورڈ کے اجلاس میں پیش کیے جانے والے ایجنڈے کو مکمل طور پر مسترد کردیا۔ سب اٹھ کر چلے گئے۔ چیئرمین پی سی بی احسان مانی دیکھتے ہی رہ گئے۔

 

اراکین نے بورڈ کے چیئرمین احسان مانی کی جانب سے وسیم خان کے اختیارات سے متعلق ایجنڈے کو پیش کرنے سے قبل ہی ماننے سے صاف انکار کر دیا۔

 

ذرائع کے مطابق گورننگ بورڈ کے اکثریتی اراکین نے ڈومیسٹک کرکٹ اسٹرکچر کے لیے نئی کمیٹی بنانے کی تجویز دی۔ 10 روز میں نیا اسٹرکچر تجویز کر کے 30 اپریل کو پیش کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔

 

کوئٹہ میں میڈیا سے گفتگو میں چیئرمین پی سی بی احسان مانی نے کہا کہ ایم ڈی پی سی بی وسیم خان کی تعیناتی بورڈ آف گورنرز کا فیصلہ تھا۔ بورڈ کے جو فیصلے ہو چکے وہ تبدیل نہیں ہوں گے، کوئی پی سی بی بورڈ کا اجلاس ہائی جیک نہیں کرسکتا۔

 

ممبر گورننگ باڈی نعمان بٹ نے کہا کہ پی سی بی کے آئین میں ایم ڈی کی کوئی گنجائش نہیں۔ احسان مانی غلط بیانی کر رہے ہیں کہ ایم ڈی کی منظوری گورننگ بورڈ نے دی۔ ایم ڈی پی سی بی کی منظوری آج کے اجلاس میں ہونا تھی۔

 

احسان مانی نے کہا کہ پہلے پلان تھا 6 یا 8 ریجنز کھیلیں گے، اب یہ ہے کہ صوبہ کھیلیں گے۔ کرکٹ کے اسٹرکچر میں پہلے سے زیادہ فرق نہیں ہوگا البتہ اب لوگوں کے ذاتی مفادات ختم ہوجائیں گے۔

حارث افضل  3 روز پہلے

متعلقہ خبریں