نواز شریف کا بیرون ملک علاج: حکومتی عہدیداروں کی متضاد رائے سامنے آگئی

اسلام آباد(پبلک نیوز) نواز شریف کو علاج کے لیے بیرون ملک جانے کی اجازت دینے بارے حکومتی عہدیداروں کی متضاد رائے سامنے آگئی، معاون خصوصی اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا کہنا ہے کہ میڈیکل بورڈ کے ارکان ڈاکٹر ہیں سیاست دان نہیں، ان پر اعتماد کرنا چاہیے۔

 

نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے معاملے پر حکومتی عہدیداروں کے متضاد بیانات سامنے آ گئے۔ معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس اعوان نے کہا کہ میڈیکل بورڈ کے ارکان ڈاکٹر ہیں سیاست دان نہیں، ان پر اعتماد کرنا چاہیے۔ ن لیگ کے دعوے کی نہیں، میڈیکل بورڈ کی حمایت کر رہی ہوں۔ قانون کے مطابق فیصلہ ہو گا۔ وفاقی وزیرفواد چودھری نے کہا کہ وفاقی کابینہ کے تمام ارکان نواز شریف کو باہر بھیجنے کے حامی نہیں ہیں۔ ان کی بھی ذاتی رائے ہے کہ نواز شریف کا باہر جانا زیادتی ہو گی۔

 

گورنر پنجاب چودھری سرور کو تو یقین تھا کہ نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکال دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ چاہتے ہیں انہیں جلد بیرون ملک بھجوا دیا جائے۔ وفاقی وزیر فیصل واوڈا نے طنزیہ ٹویٹ کیا کہ ملک میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کی بدولت۔ ابو یعنی نواز شریف، چچا شہباز اور پھر میں وہاں جا رہے ہیں، جہاں ہمارے اشتہاری رشتے دار اور لوٹی ہوئی دولت ہے، چچا آتے جاتے رہیں گے، ہم پہلے بھی سعودیہ بھاگ گئے تھے۔

 

ڈاکٹرز کے مطابق علاج کی شرط یہ ہے کہ تیمارداری کوئی اور نہیں صرف میں۔۔ مریم نواز کرسکتی ہوں، فیصل واوڈا نے لکھا یہ ہے 72 سال سے ملک کے سسٹم کا وہ بھیانک چہرہ جس کو بدلنے عمران خان آئے ہیں۔۔۔ اس فرسودہ نظام کے خلاف پہلے لڑائی کی تھی اب جنگ کریں گے۔

عطاء سبحانی  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں