مضر صحت کھانے سے بچوں کی ہلاکت، سندھ فوڈ اتھارٹی تذبدب کا شکار

کراچی (پبلک نیوز) مضر صحت کھانے سے بچوں کی ہلاکت سے متعلق تحقیقات میں تاخیر کا شکار۔ سندھ فوڈ اتھارٹی بچوں کے حاصل کردہ نمونوں کے ٹیسٹ کروانے میں تذبدب کا شکار ہوگئی۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے نجی ہوٹل میں مضر صحت کھانے سے بچوں کی ہلاکت کا معاملہ پر سندھ سرکار تیسرے دور اقتدار میں بھی جدید فوڈ لیبارٹری کے قیام میں ناکام ہے۔ سندھ فوڈ اتھارٹی کشمکش کا شکار ہے کہ بچوں کے حاصل کردہ ٹیسٹ کہاں بھیجے جائیں۔

کراچی: مضرصحت کھانا دو بچوں کی زندگیاں نگل گیا

سندھ فوڈ اتھارٹی کی پریشانی میں اضافہ ہو گیا۔ محکمہ قائم تو کر دیا گیا لیکن عملہ نہ ہونے کے برابر ہے۔ پوسٹ مارٹم میں حاصل نمونے جانچنے کے لیے سندھ میں لیبارٹری ہی موجود نہیں۔ اجلاس میں نمونے پنجاب فارنزک لیب بھینجے سے متعلق غور کیا گیا۔

سندھ فوڈ اتھارٹی میں نہ  فوڈ انسپیکٹر موجود ہے نہ ہی کیمیکل ایگزامینیشن کے لیے ایکسپرٹ موجود ہے۔ کھانے کے نمونے محفوظ کرنے کا بھی غیر موثر نظام سندھ حکومت کی کارکردگی پر بڑا سوالیہ نشان بن گیا۔ بورڈ اجلاس میں ڈی جی فوڈ اتھارٹی اور ڈاٸیریکٹرز عملہ کی کمی کا رونا روتے نظر آئے۔

حارث افضل  9 ماه پہلے

متعلقہ خبریں