خادم اعلیٰ لیپ ٹاپ اسکیم میں وسیع پیمانے پر کرپشن،نیب نے تحقیقات شروع کر دیں

لاہور(پبلک نیوز)غریبوں کو چھت کی فراہمی کے نام پر آشیانہ اقبال ہو یا پینے کے پانی کی فراہمی کا منصوبہ، کرپشن کی دیمک نے پنجاب کے محکموں کو کھوکھلا کر دیا۔ خادم اعلیٰ کی لیپ ٹاپ اسکیم میں بھی وسیع پیمانے پر کرپشن کا انکشاف، تحقیقات شروع کر دی گئیں۔

 

نیب لاہور نے خادم اعلیٰ کی لیپ ٹاپ سکیم میں کرپشن کی انکوائری شروع کر دی، اس سلسلے میں پنجاب حکومت، محکمہ خزانہ پنجاب، ہائیر ایجوکیشن کمیشن، محکمہ سکول ایجوکیشن اور کنٹریکٹر سے ریکارڈ طلب کیا جا رہا ہے، نیب لاہور نے دوہزار گیارہ، بارہ میں تین ارب روپے سے زائد بجٹ کی لیپ ٹاپ سکیم سے متعلق ریکارڈ کیلئے مراسلے بھی لکھ دیے۔

 

نیب ذرائع کے مطابق چیئرمین پی اینڈ ڈی، سیکریٹری ہائیر ایجوکیشن کمیشن، ایم ڈی پیپرا، سیکریٹری خزانہ، سابق وزیراعلیٰ کے پرنسپل سیکریٹری ندیم حسن آصف سے بھی تفتیش کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ چیئرمین پی اینڈ ڈی نے تیس جنوری دوہزار بارہ کو شہباز شریف کو لیپ ٹاپ اسکیم سے متعلق سمری ارسال کی۔

 

تیرہ فروری دوہزار بارہ کو سیکریٹری ہائیر ایجوکیشن کمیشن ڈاکٹر اعجاز منیر نے بھی وزیراعلیٰ پنجاب کو بھجوائی گئی سمری کی تائید کی۔ ایک کے بعد ایک سرکاری منصوبے میں کرپشن کا انکشاف تقاضہ کرتا ہے کہ کرپٹ عناصر کو قرار واقعی سزا دی جائے تاکہ کوئی شہری کرپشن کرنے کی جرات نہ کر سکے۔

عطاء سبحانی  4 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں