تنخواہوں میں اضافہ کا بل ن لیگی رکن نے پیش کیا، حکومت نے ٹیک اوور کیا: ترجمان وزیر اعلیٰ پنجاب

لاہور (پبلک نیوز) ترجمان وزیر اعلیٰ پنجاب ڈاکٹر شہباز گل نے کہا ہے کہ ہم ایسی بات کا سوچ ہی نہیں سکتے جو کل سے میڈیا میں چل رہا ہے۔ وزیر اعلیٰ کو گاڑی، سکیورٹی، گھر اور الاؤنس ملنے کی خبر کل سے چل رہی ہے جس پر وزیر اعظم نے مایوسی کا اظہار کیا ہے۔ وزیر اعلیٰ پنجاب نے بھی مایوسی کا اظہار کیا ہے۔

پریس کانفرنس کے دوران انھوں نے بتایا کہ بائیس سال سے وزیر اعظم نے ہمیشہ برابری کی بات کی ہے۔ وزیر اعظم نے ہمیشہ غریبوں کیلئے سوچا۔ میں نے خود اس امر کو ناپسند کیا ہے۔ بل وزیر اعلی آفس کے پاس ہے جلد گورنر کو بھجوایا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ وزیر اعلی کو صرف سکیورٹی دی جائے گی۔ باقی چیزیں تجویزکردہ تو تھیں مگر منظوری نہیں دی گئی۔ پروپوزل آئی تھی مگر اسے نامنظور کردیا گیا۔ ہمییں پتا ہے کہ عوام اس بات کو برداشت نہیں کرسکتے۔

شہباز گل نے بتایا کہ ایم این اے کی تنخواہ ایک لاکھ 50 ہزار ہے۔ کے پی کا رکن اسمبلی 80 ہزار تنخواہ لیتا ہے۔ بلوچستان کے اراکین کی بنیادی تنخواہ تین لاکھ تھی۔ پنجاب کا رکن محض 18 ہزار بنیادی تنخواہ لے رہا ہے۔

انھوں نے کہا کہ پنجاب کے ایم پی ایز کی بنیادی تنخواہ کے پی کے رکن کے برابر کر دی گئی۔ وزیر اعلیٰ پنجاب کی تنخواہ بھی کے پی کے وزیر اعلیٰ کے برابر کی گئی ہے۔ بلوچستان کے وزیر اعلی کی نسبت اب بھی وزیر اعلی پنجاب کی تنخواہ نصف ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ لاہور میں اراکین کے رہائشی اخراجات بہت زیادہ ہیں۔ بل ن لیگ کے رکن نے پیش کیا۔ اپوزیشن کے بل کو حکومت نے ٹیک اوور کیا۔ ساری باتوں کے باوجود اس بل کا دفاع کرنا بہت مشکل ہے۔ میں کوئی تنخواہ اور مراعات نہیں لیتا مگر میں اس بات کا ذکر نہیں کرتا۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں