اقتصادی رابطہ کمیٹی نے قومی خزانہ کو 120 ارب روپے کے نقصان سے بچا لیا

اسلام آباد (پبلک نیوز) اقتصادی رابطہ کمیٹی نے قومی خزانہ کو 120 ارب روپے کے نقصان سے بچا لیا۔ سابق دور حکومت کا گیس سسٹم کا مہنگا ترین منصوبہ منسوخ کر دیا۔ پی آئی اے کے لیے پانچ اعشاریہ چھ ارب روپے کی اضافی گارنٹی کی منظوری، اجلاس میں وزیر خزانہ اسد عمر قومی مفاد کے منافی منصوبوں پر برس پڑے۔

وزیر خزانہ اسد عمر کی زیر صدارت اقتصادی رابطہ کمیٹی کی بیٹھک میں اہم فیصلے۔ قومی خزانے کو 120ارب روپے کے نقصان سے بچالیا گیا۔ سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور انٹرسٹیٹ گیس سسٹم کا مہنگا ترین منصوبہ منسوخ کردیا۔ کمیٹی نے شیخوپورہ تا نوشہرہ آئل پائپ لائن فرنٹئیر آئل کمپنی کو تعمیر کرنے کی منظوری دے دی۔

ایف ڈبلیو او کی ذیلی کمپنی مالی و سارون گارنٹی کے بغیر پائپ لائن تعمیر کرے گی۔ 460کلومیٹر آئل پائپ لائن کی تعمیر کے اخراجات کمپنی خود برداشت کرے گی۔

کمیٹی نے قومی ایئرلائن پی آئی اے کے لیے 5 اعشاریہ 6 ارب روپے کی اضافی گارنٹی منظور کر لی۔ رقم انجنوں کی مرمت اور پرزوں کی خریداری کے لیے استعمال کی جائے گی۔

کمیٹی نے کپاس کی کوالٹی اور مقدار بڑھانے کے لیے نئے اقدامات کی بھی منظوری دے دی۔ فیصلہ کیا گیا کہ کپاس کی تحقیق اور ترقی کے لیے چین سے تعاون طلب کیا جائے گا۔

ای سی سی نے آئی پی پیز کی طرز پر حکومتی گارنٹی اورقومی خزانے سے ادائیگیوں سے بھی انکار کردیا۔ دوران اجلاس۔ و زیر خزانہ اسد عمر نے قومی مفاد کے منافی منصوبوں پر برہمی کا اظہار کیا۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں