یورپی پارلیمنٹ بھی کشمیریوں کے حق میں کھڑی ہو گئی

 

پبلک نیوز: یورپی پارلیمنٹ نے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال تشویشناک قرار دے دی ہے۔ کشمیریوں پر عائد پابندیاں اٹھانے کا مطالبہ کر دیا ہے۔ یورپی پارلیمنٹ میں 12 سال بعد مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر بحث ہوئی۔

 

تفصیلات کے مطابق یورپین پارلیمنٹ میں 12 سال بعد مسئلہ کشمیر پر بحث ہوئی۔ بحث کے دوران دو درجن کے قریب ممبران نے حصہ لیا۔ ممبران پارلیمنٹ نے مقبوضہ کشمیرمیں صورتحال قیامت خیز قرار دے دی۔ یورپین یونین نے بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں لوگوں کی بنیادی آزادیوں پر لگائی گئی قدغنوں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ عوام کے ذرائع آمدورفت، کمیونیکیشن اور تمام بنیادی سہولتوں کو جلد از جلد بحال کیا جائے۔

 

یورپین خارجہ اُمور کی سربراہ کی طرف سے گفتگو کرتے ہوئے یورپین افئیرز کی وزیر ٹیوپورینن کا کہنا تھا کہ یورپ پہلے دن سے اس صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہے۔ بھارت نے کشمیر کو دنیا کی سب سے بڑی جیل میں تبدیل کر دیا۔ مسئلہ کشمیر بات چیت کے ذریعے حل ہونا چاہیے۔

 

لبرل پارٹی کے اراکین کا بھارت کے تمام اقدامات کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے کہنا تھا کہ کشمیریوں کو اپنی قسمت کا فیصلہ کرنے دیا جائے۔ یورپی یونین کے اجلاس میں دیگر کئی اراکین نے بھی بھارت کے اقدامات کی مذمت کی۔

احمد علی کیف  4 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں