سینیٹر مشاہد اللہ خان اور فیصل جاوید کے درمیان سخت جملوں کا تبادلہ

اسلام آباد (پبلک نیوز) سینیٹ اجلاس میں سینیٹر مشاہد اللہ خان اور فیصل جاوید میں جھڑپ ہو گئی، دونوں کے درمیان سخت جملوں کا تبادلہ ہوا۔ مشاہد اللہ خان نے کہا کہ یہ بچے ہیں ابھی انڈے سے باہر نکلے ہیں۔ آرام سے آئیں اور ادھر آ کر سیکھیں۔

 

سینیٹ اجلاس میں سینیٹر مشاہد اللہ خان اور فیصل جاوید میں جھڑپ ہو گئی۔ سینیٹر مشاہد اللہ خان نے فیصل جاوید کو چوزا، بچہ قرار دیدیا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ بچے ہیں ابھی انڈے سے باہر نکلے ہیں۔ مذاق بنایا ہوا ہے، جو کھڑا ہوتا ہے میں میں کرتا ہے۔ آرام سے آئیں اور ادھر آکر سیکھیں۔ آگے تنگ کریں گے تو میرے پاس بہت کچھ تیار ہے۔ آپ مجھے ابا جی کہیں گے تو میں آپ کو چوزہ کہوں گا۔


اس دوران فیصل جاوید نے مشاہد اللہ کے اظہار خیال کے دوران جملے کسے۔
سینیٹ کے اجلاس کے دوران مشاہد اللہ اور فیصل جاوید کے دوران دلچسپ جملوں کا تبادلہ ہوا۔ مشاہد اللہ نے فیصل جاوید کو 'انڈا جی' کہہ دیا۔ سینیٹر فیصل جاوید نے سینیٹر مشاہد اللہ کی تقریر کے دوران مشاہد اللہ کو "باباجی" کہہ دیا۔


سینیٹر مشاہد اللہ اور سینیٹر فیصل جاوید کے مکالمے پر ایوان میں قہقہے لگے۔  چیئرمین کی جانب سے قابل اعتراض الفاظ حذف کرنے کی ہدایت کی گئی۔ اس موقع پر سینیٹر فیصل جاوید کا کہنا تھا کہ مشاہد اللہ خان اپنی عمر اور اخلاقیات دیکھیں۔ بندہ کو تمیز ہونی چاہیے۔ مشاہد اللہ خان کے بات کرنے کا طریقہ دیکھیں۔ ایسی باتوں کی اجازت نہیں دیں گے۔ ایسی باتوں سے دباؤ میں نہیں آئیں گے۔ جس کے بعد چیرمین سینیٹ نے مشاہد اللہ خان کے الفاظ حذف کرا دیئے۔

حارث افضل  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں