روپے کی قدر میں کمی کے باوجود برآمدات میں اضافہ کیوں نہیں ہوا؟

روپے کی قدر میں کمی کے باوجود برآمدات کیوں نہ بڑھ سکیں۔ حکومت نے مختلف ممالک میں تعینات ٹریڈ افسروں کو طلب  کر لیا۔ ملائشیا، کینیڈا، برازیل، چین، لندن اور ارجنٹائن کے کمرشل قونصلر واپس بلا لیے گئے۔

 

پاکستان نے برآمدات بڑھانے کے لئے موثر اقدامات اٹھانے شروع کر دیئے ہیں۔ خراب کارکردگی پر چار ممالک سے ٹریڈ افیسر واپس بلا لئے گئے۔ جن میں ملائشیا، کینڈا، برازیل اور کمرشل کونسلر چین شامل ہیں۔ رپورٹ کے مطابق کمرشل کونسلر لندن اور کمرشل کونسلر ارجنٹائن کو بھی واپس بلانے کی ہدایت کر دی گئی ہے۔

 

وزارت تحارت کی رپورٹ کے مطابق سال دو ہزار سترہ اٹھارہ میں امریکہ کو برآمدات میں خاطر خواہ اضافہ ہوا ہے جبکہ سعودی عرب نے پاکستان کی مچھلی اور گوشت پر برآمد کی پابندی ہٹا دی ہے جس سے سعودی عرب کو مچھلی اور گوشت کی برآمدات میں خاطر خواہ اضافہ ہو گا۔ رواں مالی سال میں ترکی کو پاکستانی برآمدات میں پچیس فیصد اضافہ ہوا ہے۔ رپورٹ کے مطابق ستمبر دو ہزار سترہ کے بعد روس کو پاکستانی برآمدات میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

 

متحدہ عرب امارات اور بحرین نے خوردنی اشیاء پر کڑی ایس پی ایس اقدامات متعارف کی ہیں جس کی وجہ سے پاکستانی برآمدات میں کمی ہوئی ہے۔ وزارت تجارت کے مطابق امریکہ کی جانب سے ایران پر پابندیوں کی وجہ سے برآمدات بری طرح متاثر ہوئی ہیں، جبکہ ہمسایہ ملک افغانستان سے نیٹو کی واپسی اور مختلف ٹیکسوں کی نفاذ کی وجہ سے برآمدات میں کمی ہوئی ہے۔ اسریلیا کی جانب سے ٹیرف میں کمی کی وجہ سے پاکستانی برآمدات میں منفی رجحان سامنے آیا ہے۔ ہانگ کانگ میں کاٹن دھاگہ اور چمڑے کی مصنوعات کے حوالے سے نئے قوانین متعارف ہوئے ہیں جس کی وجہ سے پاکستانی برآمدات میں کمی آئی ہے۔

حارث افضل  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں