سندھ میں گورنر راج کی خبریں بے بنیاد ہیں: وفاقی وزیر اطلاعات

اسلام آباد (پبلک نیوز) وفاقی وزیر اطلاعات چودھری فواد حسین نے کہا ہے کہ فیک اکاؤنٹس آئی ٹی کی طرف سے جو حقیقت سامنے آئی ہے وہ سب کے سامنے ہیں۔ سندھ کے عوام کا پیسہ دوبئی اور لندن میں خرچ ہوتا رہا۔

وفاقی دارالحکومت میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ غریبوں اور کسانوں کا پیسہ گھوم گھما کر زرداری صاحب کے اکاؤنٹس میں آتا رہا۔ یہ سارا معاملہ 2016 سے وفاقی حکومت دیکھ رہی تھی۔

فواد چودھری نے صحافیوں کے سوالات کے جوابات دیتے ہوئے واضح کیا کہ اس حوالے سے اس وقت کے وزیر داخلہ چوہدری نثار نے بھی کافی پریس کانفرنس کی تھی۔ یہ کیسز تحریک انصاف کی حکومت نے نہیں بنائے۔

انھوں نے کہا کہ یہ سارا معاملہ 2016سے وفاقی حکومت دیکھ رہی ہے۔ مسلم لیگ ن کی حکومت میں یہ معاملہ کیوں دبا کر رکھا گیا؟ چودھری نثار علی خان بھی اس معاملے پر جواب دہ ہیں۔ کچھ لو اور کچھ دو کی سیاست کا زمانہ ختم ہو گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ زرداری صاحب اور نواز شریف کی سیاست دفن ہو چکی ہے۔ ہم اداروں کو کنٹرول کرنے پر یقین نہیں رکھتے۔ یہ تاثر دیا جا رہا ہے کہ سندھ حکومت کا تختہ الٹنے جا رہے ہیں۔ ہم نے کبھی نہیں کہا کہ سندھ حکومت تبدیل کر رہے ہیں۔  

وفاقی وزیر نے بتایا کہ سندھ حکومت کی تبدیلی کے تاثر کو زائل کرنا چاہتے ہیں۔ وزیراعظم سے تین ملاقاتوں میں غلط  تاثر کے خاتمے پر اتفاق ہوا۔ پی پی پی اور مسلم لیگ ن نے ایک دوسرے کی چوری پر پردے ڈالے ہوئے تھے۔

پریس کانفرنس میں بتایا کہ سابقہ ادوار میں مالیاتی اداروں کے سربراہ بھی منی لانڈرنگ میں ملوث رہے۔ تھر کے بچوں، مریضوں اور مستحقین کا پیسہ لوٹا گیا۔ پی پی پی نے کرپشن سے سندھ کو کھوکھلا  کر دیا ہے۔ اومنی گروپ سے مل کر غریب عوام کا پیسہ لوٹا گیا۔

وزیر اعلیٰ سندھ کے معاملہ پر ان کا کہنا تھا کہ ہمارے 2وزراء نے الزامات پر استعفیٰ دیا۔ وزیراعلیٰ سندھ سے بھی یہی امید کرتے ہیں۔ وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کو الزامات پر مستعفی ہو جانا چاہیے۔ وزیر اعلیٰ سندھ درخواست ہے کہ خود عہدے سے ہٹ جائیں۔  

انھوں نے دعویٰ کیا کہ سندھ کے بے شمار لوگ رابطے کر رہے ہیں۔ جے آئی ٹی کی 16 ریفرنس کی سفارش سے حکومت کا عمل دخل نہیں۔ پاکستان معاشی استحکام کی جانب سے تیزی سے بڑھ رہا ہے۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں