ڈالر کی ذخیرہ اندوزی کے خلاف ایف بی آر کا کریک ڈاؤن جاری

 

کراچی (پبلک نیوز) ایف بی آر نے ایکسچینج کمپنیز سے ڈالر خریدنے والوں کا ریکارڈ حاصل کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ فارن کرنسی کے خلاف کریک ڈاون کے آپریشن میں تمام متعلقہ ایجنسی کی مدد لی جا رہی ہے۔ کریک ڈاون میں ایف آئی اے، اسٹیٹ بینک، ایف بی آر، فنانشل مانیٹرنگ یونٹ اور اے این ایف شامل ہیں۔

 

تفصیلات کے مطابق امریکی ڈالر کی ذخیرہ اندوزی کے خلاف ایف بی آر کی جانب سے کریک ڈاون کا فیصلہ کر لیا گیا۔ ایکسچینج کمپنیز سے ڈالر خریدنے والوں کا ریکارڈ حاصل کرنے کا فیصلہ کر لیا گیا۔ ایف بی آر نے اسٹیٹ بینک سے بھی مدد مانگی تھی۔

 

 

اسٹیٹ بینک کے خط کے مطابق مرکزی بینک ایکسچینج کمپنی کو فارن ایکسچینج ریگولیشن ایکٹ کے تحت ریگولیٹ کرتا ہے۔ انکم ٹیکس آرڈیننس کے تحت ایف بی آر کے پاس ڈیٹا اکھٹا کرنے کے اختیارات ہیں۔ ایف بی آر اختیارات کے تحت ایکسچینج کمپنیز سے فارن کرنسی کس کس نے خریدی کا ڈیٹا خود لے سکتا ہے۔

 

واضح رہے کہ حکومت نے ڈالر کی ذخیرہ اندزوی کے خلاف بڑا آپریشن شروع کر رکھا ہے۔ فارن کرنسی کے خلاف کریک ڈاون کے آپریشن میں تمام متعلقہ ایجنسی کی مدد لی جا رہی ہے۔ کریک ڈاون میں ایف آئی اے، اسٹیٹ بینک، ایف بی آر، فنانشل مانیٹرنگ یونٹ اور اے این ایف شامل ہیں۔ تمام متعلقہ ایجنسی کی ڈالر کی ذخیرہ اندوزی کو روکنے کے لیے کئی اہم اجلاس بھی ہو چکے ہیں۔ ڈالر کی ذخیرہ اندوزی کے خلاف آپریشن کا مقصد مقامی مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت روپے کے مقابلے کم کرنا ہے۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں