چھوٹے دکانداروں کو بھی ٹیکس نیٹ میں لانے کا فیصلہ

اسلام آباد (پبلک نیوز) ملک کی آبادی  کے ایک فیصد لوگ بھی ٹیکس نہیں دیتے۔ ایف بی آر کے انکشاف پر حکومت نے بڑا فیصلہ کر لیا۔ چھوٹے دکانداروں کو بھی ٹیکس نیٹ میں لایا جائے گا۔ ٹیکس دہندگان کی تعداد ساڑھے 15 لاکھ سے 60 لاکھ تک لے جائی جائے گی۔

 

ملک میں کتنے فیصد لوگ ٹیکس دہندگان ہوں گے تو جواب ہے کہ کُل آبادی کے ایک فیصد لوگ بھی ٹیکس نہیں دیتے۔ ٹیکس دہندگان سے متعلق ایف بی آر کا ہوشربا انکشاف سامنے آ گیا۔

 

ایف بی آر حکام نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ اس سال ساڑھے 15 لاکھ لوگوں نے ٹیکس ریٹرنز جمع کرائے۔ ریٹرن فائلرز کی تعداد ایک فیصد سے کم ہے۔ بھارت میں ٹیکس دینے والوں کی تعداد آبادی کا 4 فیصد ہے۔ ایف بی آر حکام نے 50 سے 60 لاکھ لوگوں کو ٹیکس نیٹ میں لانے کے عزم کا اظہارکیا۔

 

حکومت نے معیشت  کے استحکام کے لئے ٹیکس دہندگان سے متعلق بڑا فیصلہ کر لیا۔ چھوٹے دکانداروں کو بھی ٹیکس نیٹ میں لایا جائے گا۔ وزیر مملکت برائے ریونیو حماد اظہر کا کہنا ہے کہ ٹیکس دہندگان  کی تعداد بڑھانے کے لئے سمال شاپ کیپرز کو ٹیکس نیٹ میں لانا ضروری ہے۔ وزیر مملکت حماد اظہر نے مزید کہا کہ چھوٹے دکانداروں کے لیے ٹیکس میں کاروبار، جگہ سمیت تمام پہلو دیکھیں گے۔

حارث افضل  2 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں