عدالتی، آئینی معاملات کو سیاسی اکھاڑے کی نذر نہیں کرنا چاہئے: فردوس عاشق

لاہور(پبلک نیوز) وزیراعظم کی معاون خصوصی اطلاعات ونشریات فردوس عاشق اعوان کا کہنا ہے کہ احساس پروگرام کے تحت وفاق صوبوں سے مل کر کام کرے گا۔ پاکستان کے بڑے صوبے کا بجٹ پیش کیا جا رہا ہے۔ امید ہے یہ بجٹ پنجاب کے عوام کی امنگوں کی ترجمان کی کرے گا۔

 

لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے معاون خصوصی وزیراعظم برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ بنچ اور بار کے خلاء کو کم کرنے کی کوشش کریں گے۔ آئیں مل کر بیٹھ کر نئے پاکستان کی تعمیر کریں۔ اپوزیشن عدالتوں کے احترام کا درس دیتی ہے روز ایک لیکچرار عدالتوں کی آزادی کی بات کرتی ہے، جو بات آپ کر رہے ہیں اس کی فریکنسی کو سمجھتے ہیں جہاں جہاں جڑتی ہے وہاں مفادات جڑتے ہیں۔ توقع ہے بارز نے ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہے وہ قابل تحسین ہے۔

فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ اپوزیشن کو دعوت دیتے ہیں، آئینی مسلوں کو سیاسی مسئلوں میں نہ کھیسٹیں، مجھے کیوں نکالا یہ بیانیہ کی گردان کون لیکچرار لے کر پھرتے رہے یہ کرتے کرتے جیل کے پیچھے چلے گئے۔ عدالت نے نکالا کیا وہ عدالتوں سے پوچھ رہے تھے۔ آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنا اسپیکر کا استحقاق ہے جو آئین و قانون کے مطابق ہو گا وہ فیصلہ کریں گے، جس کا جو کام ہے اسے کام کرنے دیں۔ وفاق و صوبے میں ایک جماعت کی حکومت ہے اچھے کاموں کی تکمیل کے لئے تعاون کرتے ہیں۔ محسن داوڑ اور علی وزیر دہشت گردی کیسز کے تحت عدالتوں میں مقدمات کا سامنا کر رہے ہیں۔

 

انہوں نے مزید کہا کہ عدالتی اور آئینی معاملات کو سیاسی اکھاڑے کی نذر نہیں کرنا چاہئے۔ وکلاء نے قانون کی حکمرانی کے لیے ہرتال کی کال کو مسترد کر دیا،عدالتون میں تاریخیں پڑنے سے عام سائل متاثر ہوتا ہے۔ حکومت عدالتی اصلاحات کے لیے کوشش کر رہی ہے،جو قرضے سابقہ حکومتوں نے لئے اس کی اقساط ادا کر رہے ہیں، سود ڈالر میں ادا کرتے ہیں، یہ پریشر عارضی ہے۔ مشرف کا مقدمہ پہلے ہی عدالت میں ہے اس دور کے لوگوں نے کرپشن کی ہو گی، ان سب کو بلا لیں گے۔

عطاء سبحانی  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں