موبائل سموں کو غیرقانونی طریقہ سے کار آمد بنانیوالے گروہ گرفتار

کراچی (پبلک نیوز) شہر قائد سے سی ٹی ڈی پولیس نے موبائل فون سموں کو غیر قانونی طور پر کار آمد بنانے والے گروہ کے سات کارندے گرفتار کر لیے ہیں۔

فلاحی ادارے کا نام استعمال کرتے ہوئے سادہ لوح عوام کے فنگر پرنٹس حاصل کرنے کا انکشاف ہوا ہے۔ ملزمان دہشت گردی، بھتہ خوری، اغواء برائے تاوان جیسے سنگین جرائم کی سہولت کاری کر رہے تھے، گھناؤنے دھندے کی روک تھام کے لیے پی ٹی اے اور ایف آئی اے سے بھی رابطہ کیا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق کاؤنٹر ٹیراریزم ڈپارٹمنٹ کی جانب سے کراچی کینٹ اسٹیشن کے قریب کارروائی کی گئی۔ موبائل فون سموں کو غیر قانونی طور پر کار آمد بنانے والے گروہ کے سات کارندے گرفتار کر لیے جبکہ تین ملزمان فرار ہو گئے۔

سی ٹی ڈی انچارچ راجہ عمر خطاب نے پریس کانفرنس میں بتایا کہ ملزمان جعل سازی کے ذریعہ سادہ لوح عوام کے فنگر پرنٹس حاصل کرتے تھے۔ ملزمان کی فروخت کردہ ہزاروں سمیں ایکٹیو ہو چکی ہیں جبکہ بڑی تعداد میں ان ایکٹیو سمیوں کے علاوہ دیگر آلات بھی برآمد کر لیے گئے۔

راجہ عمر خطاب کا مزید کہنا تھا کہ چائنہ قونصل خانہ پر حملے میں مارے جانے والے دہشت گرد بھی ایسی ہی سمیں استعمال کر رہے تھے جس کی وجہ سے بے گناہ 13 افراد کو تفتیش کے سخت مراحل سے گزرنا پڑا۔ موبائل فون کمپنیوں اور فرنچائز کے خلاف کارروائی کے لیے پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی اور فیڈرل انوسٹی گیشن ایجنسی سے رابطہ کیا جائے گا۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں