غزہ میں فلسیطینیوں کے قتل عام کی تحقیقات میں امریکہ رکاوٹ

پبلک نیوز: غزہ میں اسرائیلی فوج کے ہاتھوں فلسطینیوں کے قتل عام کی سلامتی کونسل کی تحقیقات امریکہ نے روک دیں۔

تفصیلات کے مطابق کویت کی جانب سے  قومی سلامتی کا ہنگامی اجلاس بلانے کی درخواست کو منظوری نا مل سکی جس کے بعد سلامتی کونسل کا اجلاس ملتوی ہو گیا۔ جنوبی افریقہ نے تل ابیب اور ترقی نے اسرائیل اور امریکہ سے اپنے سفیر واپس بلا لیے ہیں۔ ترقی کے صدر نے امریکی سفارتخانے کی مقبوضہ بیت المقدس منتقلی کی سخت مذمت کی اور کہا کہ امریکہ اور اسرائیل انسانیت کے خلاف جرائم کے مرتکب ہو رہے ہیں۔

امریکہ غزہ میں اسرائیلی فوجیوں کے ہاتھوں فلسیطینیوں کے قتل عام کی اقوام متحدہ کی تحقیقات میں رکاوٹ بن گیا۔ غزہ میں فلسیطینیوں کے قتل عام کی سلامتی کونسل کی تحقیقات کی درخواست امریکہ نے مسترد کر دی- سلامتی کونسل نے غزہ سرحد پر شہریوں کے قتل عام کی تحقیقات کا مطالبہ کیا تھا۔

غزہ میں فلسیطینیوں کی نسل کشی پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اجلاس بھی تاخیر کا شکار ہو گیا۔ کویت نے ہنگامی اجلاس بلانے کی درخواست دی تھی مگر فلسطینیوں کی شہادتوں کے باوجود اجلاس نہ بلایا جا سکا۔ دوسری جانب ترک صدر رجب طیب اردگان نے کہنا تھا کہ اسرائیلی غزہ میں فلسطینیوں کی نسل کشی اور ریاستی دہشت گردی کر رہا ہے۔ اسرائیل ایک دہشت گرد ملک ہے۔

احمد علی کیف  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں