گورے رنگ کا زمانہ، کب ہوگا پرانہ

پبلک نیوز: امریکہ میں سیاہ فام خواتین کا رنگ گورا کرنے کا جنون، لاکھوں افریقی خواتین رنگ گورا کرنے کے چکر میں سستی کریموں کا استعمال کر کے خود کو مزید مشکلات سے دوچار کر لیتی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سستی کریموں میں زہریلے مادوں کی ملاوٹ ہوتی ہے جو جلد پر تیزاب جیسے اثرات مرتب کرتے ہیں اور جلد کو خراب کرت ہیں۔ کسی زمانے میں افریقہ کی بلیک بیوٹی مشہور ہوا کرتی تھی۔ افریقی سیاہ فام خواتین کو غیر معمولی کشش کا حامل تصور کیا جاتا تھا۔ مگر بدلتے دور کے ساتھ ساتھ خوبصورتی کا معیار بھی بدلتا جارہا ہے۔اور اب اپنی جلد کا رنگ ہلکا کرنے کے لیے بے تحاشہ کریموں کا استعمال کر رہی ہیں۔

جلد کو نکھارنے والی کریموں کے اند ر بہت زیادہ مقدار میں کیمیکلز موجود ہوتے ہیں جس سے جلد کو نقصان پہنچتا ہے۔ ایسی چند شہرت یافتہ بین الاقوامی کاسمیٹکس کمپنیوں کی جانب سے تیار کردہ کریمیں جلد کے لیے اچھی اور فائدہ مند ہوتی ہیں مگر یہ کریمیں بہت مہنگی ہوتی ہیں جو ہر کوئی نہیں خرید سکتا۔

اس لیے جلد کو صاف کرنے اور نکھارنے کے لیے سستی کریموں کا استعمال کیا جاتا ہے جو جلد کو نقصان دیتی ہیں۔ ان کریموں میں ملے زہریلے مادے جلد پر تیزاب جیسے اثرات مرتب کرتے ہیں۔

احمد علی کیف  4 ماه پہلے

متعلقہ خبریں