پاکستانی معیشت کیسے مستحکم ہو سکتی ہے؟

پاکستانی معیشت کو استحکام کیسے نصیب ہوگا ہر جگہ پاکستانی معیشت موضوع بحث بنی ہوئی ہے۔ موجودہ حکومت جہاں معیشت کی بہتری کے لیے اہم اقدامات کر رہی ہیں وہی اسے مختلف چیلنجز بھی درپیش ہیں جو معیشت کی تصویر کو دھندلا کر رہے ہیں۔

 

موجودہ حکومت معیشت کو فروغ دینے کے لیے مختصر، درمیانے اور طویل مدتی منصوبے پرعمل پیرا ہیں۔ حکومت کے مختصر منصوبے کے پہلے سال میں تجارتی خسارے کو کم کرنا، ترسیلات زر میں اضافہ ہے۔ حکومت کے درمیانی مدتی منصوبے میں معیشت کو استحکام دینا ہے۔ حکومت کے طویل مدتی منصوبے میں ملکی معیشت کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنا ہے۔

 

معاشی ماہرین کے مطابق موجودہ حکومت نے پہلے مرحلے میں معیشت کو ڈوبنے سے بچا لیا ہے اور اس کے واضع ثبوت وزیراعظم کی دوست ممالک سے بہتر خارجہ پالیسی بتائی جارہی ہے۔ موجودہ قیادت پر دوست ممالک کے اعتماد کا مظہر ہے۔ پاکستان میں سعودی عرب، متحدہ عرب امارات اور چائنہ بڑی سرمایہ  کاری کرنے جارہے ہیں۔

 

موجودہ حکومت نے رواں مالی سال میں آمدن اور اخراجات میں توازن پیدا کیا، ترسیلات زر میں اضافہ اور بجٹ خسارے میں کمی حکومت کی بہتر معاشی پالیسیوں کی عکاس ہے۔ حکومت کے بہتر معاشی اقدامات میں شامل بیرون ملک سرمایہ کاری کے لیے سازگار ماحول تشکیل دینا ہے۔ بیرون ملک سرمایہ کاری سے پاکستان میں ترقی اور خوشحالی کے نئے راستے کھلنے کی امید پیدا ہو رہی ہے۔

 

متحدہ عرب امارت کا پاکستان میں 3 ارب ڈالر بیل آؤٹ پیکج اور سعودی عرب کی گوادر میں تیل اور گیس کی ریفانئری لگانے کا منصوبہ شامل ہیں۔ موجودہ حکومت کو متعدد معاشی چیلنجز بھی درپیش ہیں جن میں سرفہرست یہ ہے کہ حکومت نے ابھی تک معاشی پالیسی کو بہتر طور پر پیش نہیں کیا، جس سے معیشت کی بحالی ممکن ہوسکے۔ حکومت کو دوسرا بڑا چیلنج وضح کردہ پالیسیوں پر عمل پیرانہ ہونا ہے، جوکہ موجودہ حکومت کے منشورمیں سرفہرست تھا۔ حکومت کو تیسرا بڑا چیلنج رواں مالی سال میں آئی ایم ایف کے حوالے سے واضح پیغام نہ دینا ہے۔

 

حکومت کو چوتھا بڑا چیلنج سیاسی درجہ حرارت میں کمی لانے کا ہے، سیاسی منظر نامے میں حکومت اور اپوزیشن ایک پیج پر نہیں دکھائی دے رہی جس سے حکومت کو میثاق معیشت کرنے میں دشواری کا سامنا ہے۔ بڑا چیلنج معیشت کے ساتھ ساتھ  انسانی اور سماجی ترقی میں انقلاب لانے کا ہے، عام آدمی کی زندگی بہتر بنانے اور معاشرے میں انقلاب لانے کے لیے حکومت کو مزید ہنگامی اقدامات کی ضرورت ہیں۔

لیکن عام پاکستانی پُر امید ہے کہ حکومت اپنے معاشی اہداف کو احسن طریقہ سے پائے تکمیل تک پہنچانے میں کامیاب ہو جائے گی۔

حارث افضل  7 ماه پہلے

متعلقہ خبریں