نواز شریف کو ضمانت ملنے کے فیصلے پر حکومتی ردعمل سامنے آگیا

اسلام آباد(پبلک نیوز) سابق وزیراعظم نواز شریف کو ضمانت ملنے کے فیصلے پر حکومتی ردعمل، معاون خصوصی اطلاعات فردوس عاشق اعوان کا کہنا ہے کہ نواز شریف کی طبی بنیاد پرسزا معطل ہوئی، سزا ختم نہیں ہوئی، عارضی بنیادووں پر ریلیف ملا ہے۔

 

سابق وزیراعظم نواز شریف کو ضمانت ملنے کے فیصلے پر حکومتی ردعمل سامنے آگیا، معاون خصوصی اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ نواز شریف کی طبی بنیاد پر سزا معطل ہوئی، سزا ختم نہیں ہوئی، عارضی بنیادووں پر ریلیف ملا ہے، نواز شریف کی صحت یابی کے لیے دعا گو ہیں، دنیا کے کسی قانون میں کوئی بھی حکومت ذمہ داری نہیں اُٹھاسکتی، زندگی دینا اور لینا اللہ کے اختیارمیں ہے۔ نواز شریف کے باہر جانے سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ عدالتیں آزاد اور خود مختار ہیں، وہ بھی فیصلہ کریں گی، عمل کریں گے۔

 

دوسری جانب اٹارنی جنرل آف پاکستان انور منصور کا کہنا تھا کہ دوپہر 2 بجے نوٹس ملا کہ 4 بجے پیش ہوجائیں، نواز شریف کے کیس میں نیب فریق تھی لیکن ہمارے افسر کو کہا گیا کیا کہ آپ گارنٹی دیں کہ منگل تک نواز شریف کا انتقال نہیں ہو گا؟ زندگی اور موت کی کوئی گارنٹی نہیں دے سکتا ہے، ہم کیس میں فریق نہیں، اگر نوٹس آیا تو عدالت جائیں گے۔ کیس میں ہمارا کوئی ذاتی مفاد نہیں۔ اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ اگر نواز شریف کو اس حالت میں ضمانت مل سکتی ہے، تو جیل میں موجود ٹی بی یا کینسر کے مریضوں کو کیوں نہیں مل رہی۔

عطاء سبحانی  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں