کھوکھر برادران کے خلاف زمینوں پر قبضے کیس میں اعلیٰ سطح کی کمیٹی تشکیل

لاہور(ادریس شیخ ) سپریم کورٹ نے کھوکھر بردارن کے زمین پر قبضوں کے الزام میں سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو کی بنائی اعلی سطحی کمیٹی سے پیش رفت رپورٹ مانگ لی ہے، عدالت نے ایل ڈی اے، کمشنر، ڈپٹی کمشنر اور اینٹی کرپشن سمیت دیگر حکام رپورٹ پیش کرنے کا بھی حکم دیا ہے۔

 

سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں کھوکھر برادران کے خلاف زمینوں پر قبضے کیس کی سماعت ہوئی۔ محکمہ اینٹی کرپشن حکام نے عدالت کو بتایا کہ کھوکھر برادران کی سرکاری افسروں سے ملی بھگت کے نتیجے میں زمینوں کی فردیں جاری کی گئیں، 8 ہزار 700 کنال میں سے 402 کنال اراضی غیرقانونی طور پر منتقل کی گئی۔ کھوکھر برادران نے غیرقانونی طریقہ کار اختیار کر کے قومی خزانے کو بھاری نقصان پہنچایا۔

 

محکمہ اینٹی کرپشن تحقیقات کے مطابق کھوکھر برادران زمینوں کی خردبرد میں قصور وار پائے گئے ہیں، کھوکر برادران کے خلاف 5 مقدمات درج کیے گئے ہیں، جبکہ وکیل ایل ڈی اے نے عدالت کو بتایا کہ کھوکھر برادران کو جرمانے کے نوٹسز جاری کر دیئے گئے ہیں۔

 

جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیئے کہ انکوائریوں کی رپورٹ کی روشنی میں پتہ چلے گا کہ رجسٹریاں کب بنیں؟عدالت نے کھوکر برادران کا مؤقف جاننے کے لئے اعلیٰ سطح کی کمیٹی تشکیل دیتے ہوئے سماعت مارچ کے دوسرے ہفتے تک ملتوی کر دی۔

عطاء سبحانی  5 ماه پہلے

متعلقہ خبریں