شہباز شریف کے صاحبزادوں نے بزنس ایمپائر کیسے بنایا؟ نیب کی کھوج جاری

لاہور(ادریس شیخ) حمزہ اور سلمان شہباز نے سرکاری حیثیت کا خوب فائدہ اٹھایا۔ سلمان اور حمزہ نے دس سالہ حکومت میں چند کروڑ کی ایک کمپنی سے اربوں روپے کی مالیتی 14 کمپنیز قائم کیں۔ نیب کی شریف فیملی کے آمدن سے زائڈ اثاثوں کی کھوج جاری۔

 

شہباز شریف کے صاحبزادوں نے ایمپائر کیسے کھڑی کی؟ نیب کی کھوج جاری، نیب ذرائع کے مطابق شہباز شریف کے صاحبزادے سلمان اور حمزہ شہباز سرکاری ٹھیکوں سے مستفید ہوتے رہے، سلمان اور حمزہ سرکاری دفاتر، محکموں اور منصوبوں سے ذاتی کمپنیز کو فائدہ پہنچاتے رہے اور کاروبار کو وسعت دیتے رہے، نیب کا کہنا ہے کہ سلمان اور حمزہ نے دس سالہ حکومت میں چند کروڑ کی ایک کمپنی سے اربوں روپے کی مالیتی 14 کمپنیز قائم کیں۔


شہباز شریف کے صاحبزادوں کی ملکیتی کمپنیز میں یورپین ایشین ٹریڈنگ، مدینہ ٹریڈنگ، شریف فیڈز، مدینہ کنسٹرکشن، شریف پولٹری فارمز، شریف ڈیری فارمز، رمضان انرجی، شریف ملک، کرسٹل پلاسٹک، چنیوٹ پاور، اے جی انرجی، العربیہ شوگر ملز اور یونسف پاور کمپنیز شامل ہیں۔ 14کمپنیز میں سلمان شہباز 1ارب99 کروڑ 90 لاکھ 31 ہزار روپے مالیت کے شیئرز کے مالک اور حمزہ شہباز 16 کروڑ 91 لاکھ 93 ہزار مالیت کے شیئرز رکھتے ہیں، نیب ذرائع کے مطابق اصل ملکیت چھپانے کیلئے شہباز شریف کے صاحبزادوں نے اپنے ملازمین کے نام پر شیئرز بھی منتقل کیے۔

عطاء سبحانی  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں