روپے کی بے قدری اور گزشتہ 5 سال

گزشتہ پانچ برس کے دوران روپے کے مقابلے میں ڈالر کی قیمت میں 48.11 فیصد کا ہو شربا اضافہ ہوا۔ 20 مئی 2015 کو روپے کے مقابلے میں ڈالر کی قیمت 103 روپے 30 پیسے تھی۔

21 مئی 2019 کو ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح 153 روپے پر پہنچ گئی۔ مئی 2015 ء میں یورو 144.01 روپے کا تھا جو مئی 2019 ء میں بڑھ کر 167 روپے 50 پیسے کا ہوگیا۔ مئی 2015 برطانوی پاؤنڈ 158 روپے 10 پیسے سے 20.97 فیصد بڑھ کر 191 روپے 25 پیسے کا ہو گیا۔

آسٹریلین ڈالر 81 روپے 20 پیسے سے بڑھ کر 104 روپے ہو چکا ہے۔ کینیڈین ڈالر 84 روپے 17 پیسے سے بڑھ کر 111 روپے 50 پیسے ہو گیا۔ جاپانی ین 0.848 سے بڑھ کر 1.36 روپے پر پہنچ گیا۔ دبئی، سعودی عرب اور کویت کی کرنسیوں میں بھی 47.66 فیصد تک کا ہوشربا اضافہ ہوا ہے۔

20 مئی 2015 کو ایک سعودی ریال 27 روپے 36 پیسے کا تھا جو اب 40 روپے 40 پیسے کی بلند ترین سطح پر پہنچ چکا ہے۔ مئی 2015 ء میں دبئی درہم 28.05 روپے پر تھا جو اب41 روپے 30 پیسے کا ہو گیا ہے۔ کویتی دینار پانچ برسوں کے دوران 333.10 روپے سے 46.65 فیصد بڑھ کر 488.50 روپے پر پہنچ گیا۔

تمام غیر ملکی کرنسیوں کی شرح تبادلہ میں سب سے زیادہ اضافہ جاپانی ین کی قیمت میں ہوا۔ جاپانی ین کی  قیمت پانچ برسوں میں 60.38 فیصد اضافہ ہوا۔ دوسرے نمبر ڈالر کا ہے جسکی قیمت میں48.11 فیصد اضافہ ہوا۔ تیسرے نمبر پر سعودی ریال کی قیمت میں 47.24 فیصد کا اضافہ ہوا۔

پانچ برسوں کے دوران سب سے کم اضافہ برطانوی پاؤنڈ کی قیمت میں ہوا۔  60 ماہ کے دوران پاؤنڈ سٹرلنگ کی قیمت میں صرف 20.67 فیصد کا اضافہ ہوا۔

احمد علی کیف  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں