پراگون سٹی اسکینڈل، خواجہ برادران کے خلاف تحقیقات میں اہم پیش رفت

لاہور(پبلک ) خواجہ برادران پر قسمت کی دیوی مہربان ہو گئی، کوڑیوں کی زمین کے بدلے کروڑوں کی زمین ملنے لگی۔ پراگون سٹی میں 92 کنال 12 مرلے زمین کے عوض ایگزیکٹو بلک میں 32 کنال کی بیش قمیت زمین دی گئی۔

 

خواجہ برادران پر قسمت کی چھتر چھایا ایسی کے مٹی کو ہاتھ لگائیں تو سونا ہو جائے۔ نیب لاہور نے 21 سال کے دوران کیا کمایا کیا کھایا اور کہاں خرچ کیا کا حساب مانگا تو کہا کہ سب بھول گئے ہیں۔ خواجہ برادران کیجانب سے تحریری جواب میں کہا گیا کہ گزشتہ 6 سال کا ریکارڈ موجود ہے وہ سارے کا سارا فراہم کر دیا ہے۔

 

خواجہ برادران ایک جانب نیب کو یہ کہتے رہے کہ پراگون سٹی سے نہ کبھی بزنس کیا اور نہ قرض لیا اور نہ ہی انوسٹمنٹ کی تو دوسری جانب خود اقرار بھی کر لیا کہ پراگون کو 92 کنال 10 مرلے زمین مہیا کی جس کے عوض 32 کنال پر مشتمل پلاٹ ملے۔ خواجہ سعد رفیق نے نیب کو بتایا کہ انہوں نے 20 کنال پر مشتمل 10 پلاٹس پر پراگون سٹی کو 1 کروڑ 50 لاکھ ڈویلپمنٹ چارجز کے طور پر دیے جبکہ 12 کنال زمین اپنے بھائی خواجہ سلمان رفیق کو تحفے کے طور پر دی۔

 

خواجہ سعد رفیق نے تحریری جواب میں کہا ہے کہ 92 کنال 12 مرلے زمین پر پراگون سے 69 لاکھ11 ہزار 4 روپے بطور کمشن وصول کیے۔ کن لوگوں سے زمین لی۔ پیسوں کی آدائیگیاں کیسے کیں اور زمین کہاں کہاں ہر واقع تھی۔ سب ثبوت دے دیے ہیں۔

عطاء سبحانی  4 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں