پاکستان کی تجویز پر رضا مند، بھارت نے کرتارپور بارڈر کھولنے کی منظور دیدی

نئی دہلی (پبلک نیوز) پاکستان نے سفارتی محاذ پر بڑی کامیابی حاصل کرلی ہے۔ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی کابینہ نے پاکستان کی تجویز مانتے ہوئے کرتارپور سرحد کھولنے کی منظوری دے دی۔ وزیراعظم عمران خان 28 نومبر کو کرتارپورراہداری کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔

بھارت پاکستان کی سرحد تک اپنی حدود میں سکھ یاتریوں کے لیے سڑک تعمیر کرے گا۔ بھارتی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نےکہا کہ راہداری منصوبہ 3 سے 4 کلو میٹر پر مشتمل ہے جس سے سکھ یاتری سال بھر بآسانی ننکانہ صاحب جاسکیں گے۔

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے ٹویٹ کیا کہ بابا گرونانک کے 550ویں سالگرہ پر کرتار پور راہداری کھولنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ہم سکھ یاتریوں کو پاکستان آمد پر خوش آمدید کہتے ہیں۔

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات نے کہا کہ کرتار پور سرحد کھولنے کے فیصلہ کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ کرتا پور راہداری کا سب سے زیادہ فائدہ سکھ برادری کو ہوگا۔

سفارتی ذرائع کے مطابق کرتار پور سرحد کھولنے کے حوالے سے پاک بھارت سفارتی رابطے بھی شروع ہو گئے۔ بھارتی دفتر خارجہ کی جانب سے پاکستانی ہائی کمیشن کو نئی دہلی میں اس حوالے سے خط بھی لکھا گیا ہے۔ بھارت نے کرتار پور کوریڈرور کھولنے پر پاکستان کا شکریہ ادا کیا۔

 واضح رہے کہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے سابق بھارتی کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو کی  پاکستان آمد پر انھیں کرتار پور بارڈر کھولنے کی تجویز دی تھی۔

احمد علی کیف  3 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں