پی اے سی کا کمرہ نیب کی تفتیش سے بچنے کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے: فواد چودھری

اسلام آباد (پبلک نیوز) وفاقی وزیر برائے اطلاعات فواد چودھری نے کہا ہے کہ پی اے سی کا کمرہ نیب کی تفتیش سے بچنے کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔ نیب زدہ لوگوں کو پی اے سی میں شامل کیا جا رہا ہے۔ سنا ہے سعدر فیق کو کمیٹی کا ممبر بنانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ شہباز شریف کو اخلاقی طور پر مستعفی ہو جانا چاہئے۔

 

شہر اقتدار میں وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے وفاقی وزیر برائے اطلاعات فواد چودھری کا کہنا تھا کہ پی اے سی کو کرپشن کے خلاف شیلڈ کے طور پر استعمال کیا جا رہا ہے۔ پی اے سی کا کمرہ نیب کی تفتیش سے بچنے کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔ کابینہ نے پی اے سی کے استعمال پر ناپسندیدگی کا اظہار کیا۔ نیب زدہ لوگوں کو پی اے سی میں شامل کیا جا رہا ہے۔

 

 

فواد چودھری کا کہنا تھا کہ سنا ہے سعدر فیق کو کمیٹی کا ممبر بنانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ شہباز شریف کو اخلاقی طور پر مستعفی ہو جانا چاہئے۔ شہباز شریف مطلوب افراد کو بچا رہے ہیں۔ اجلاس میں اشیاء کی قیمتوں میں کمی کا معاملہ زیر بحث آیا۔ ن لیگ کے پہلے 6 ماہ میں مہنگائی میں 6.5 فیصد اضافہ ہوا۔ ہماری حکومت کے پچھلے 6 ماہ میں 1.8 فیصد اضافہ ہوا۔ باہر سے مہنگی گیس خرید کر سبسڈی دی جارہی ہے۔

 

وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ سیمنٹ، بجلی اور ٹرانسپورٹ کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں واضح کمی کا رحجان دیکھا گیا۔ اوورسیز پاکستانی ہمارا اثاثہ ہیں۔ غریب لوگوں کے لیے صحت کارڈ کا اجرا کیا ہے۔ فی کارڈ میں 7 لاکھ 20 ہزار روپے تک فری میڈیکل کی سہولت ہو گی۔ صحافیوں اور فنکاروں کو انصاف صحت کارڈ دیا جائے گا۔

 

ان کا کہنا تھا کہ 23 فیصد عوام قدرتی گیس باقی ایل این جی استعمال کرتے ہیں۔ ن لیگ کے دور حکومت میں مہنگی ایل این جی درآمد کی گئی۔ فاٹا میں موبائل سروس فراہم کی جائےگی۔

حارث افضل  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں