عالمی سطح پر جنگی سازو سامان کی خریداری میں اضافہ

جنگیں دنیا کےامن کو نگلنے لگیں۔ عالمی سطح پر جنگی سازو سامان کی خریداری میں 8فیصد اضافہ ہو گیا۔ امریکاہتھیاروں کی فروخت میں اورسعودی عرب خریداری میں سب سے آگے ہے۔ اسٹاک ہوم انٹرنیشنل پیس ریسرچ نےرپورٹ جاری کردی۔

دفاع سے غافل نہیں ہونا چاہیئے۔ لیکن دنیا کے بیشتر ممالک پر طاقت کا نشہ سوار ہے۔ ایسے میں اسلحہ فروخت کنندگان ممالک کوبھی خوب کمائی ہو رہی ہے۔

اسٹاک ہوم انٹرنیشنل پیس ریسرچ نےہتھیاروں کی خریدوفروخت پررپورٹ جاری کردی۔ ہتھیاروں کی عالمی سطح پر سب سے بڑا فروخت کنندہ امریکا ہے۔ اسلحہ کی سب سے زیادہ خریداری کرنے والا ملک سعودی عرب ہے۔

رپورٹ کے مطابق 2014 سے 2018 کے درمیان ہتھیاروں کی خرید و فروخت میں ماضی کی نسبت 8 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ امریکا دنیا بھر میں مجموعی طور پر 36 فیصد ہتھیار فروخت کر رہا ہے۔ جس کے بعد روس، فرانس، جرمنی اور چین اسلحے کی فروخت میں بالترتیب بڑے ممالک ہیں۔

اسلحہ کی خریداری میں سب سےزیادہ اضافہ خلیجی ممالک میں دیکھنےمیں آیا۔ جنہوں نے 2014 سے 2018 کے درمیان 87 فیصد زیادہ ہتھیارخریدے، سعودی عرب گزشتہ چار برسوں میں 192 فیصد اضافے کے ساتھ اب بھی دنیا میں سب سے زیادہ ہتھیار خریدنے والا ملک ہے۔ سعودی عرب کےبعد بھارت، مصر، اسرائیل، قطر اور عراق اسلحہ کی خریداری میں بڑے ممالک ہیں۔

احمد علی کیف  1 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں