ایرانی صدر حسن روحانی نے امریکا کے ساتھ مذاکرات سے انکار کر دیا

واشنگٹن/تہران(پبلک نیوز) امریکا ایران کشیدگی برقرار، ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ ایران کسی دھمکی کے سامنے نہیں جھکے گا۔ قائم مقام امریکی وزیرِ دفاع کہتے ہیں خلیج فارس میں اضافی امریکی فوج کی تعیناتی کے بعد فی الحال ایران کی جانب سے حملے کا خطرہ ٹلا ہوا ہے۔

 

ایرانی صدر حسن روحانی نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے بات چیت کی پیشکش کو ٹھکرا دیا، حسن روحانی نے اپنی تقریر میں کہا کہ موجودہ حالات بات چیت کے لیے ساز گارنہیں، ایران کے پاس واحد راستہ مزاحمت ہے۔ حسن روحانی نے اپنے خطاب میں یہ بھی کہا کہ تمام تر سیاسی اور معاشی دباؤ کے باوجود ایرن کے عوام کسی دھمکی کے سامنے نہیں جھکیں گے۔ امریکا کو غلط فہمی ہے کہ وہ ایران کی شان و شوکت کو ختم کر سکتے ہیں۔

 

مشکلات اور پابندیوں کے دنوں میں نئے منصوبوں کا افتتاح، ایران کی جانب سے وائٹ ہاؤس کو پرعزم جواب ہے۔ دوسری جانب پینٹاگون کا کہنا ہے خلیج فارس میں اضافی امریکی فورسز کی تعیناتی نے ایران کے ممکنہ حملوں کو روک دیا ہے۔ قائم مقام امریکی وزیردفاع پیٹرک شینن اوردیگر حکام نے کانگریس اراکین کو مشرقِ وسطیٰ میں امریکی مفادات کودرپیش ایرانی خطرات سے آگاہ کیا۔شینن نے بریفنگ میں کہا کہ مشرق وسطیٰ میں پائپ لائن اور جہازوں پرحملے میں ایران ملوث تھا۔

عطاء سبحانی  4 ماه پہلے

متعلقہ خبریں