ساہیوال واقعہ: مقتولین کے اہلخانہ نے جے آئی ٹی کو بیانات قلمبند کرا دیئے

لاہور (پبلک نیوز) ساہیوال واقعہ میں جاں بحق ہونے والے خلیل کے اہلخانہ نے جے آئی ٹی کو بیان قلمبند کرادئیے۔ مقتول خلیل کے بیٹے عمیر نے تحریری بیان میں کہا کہ ابو نے اہلکاروں کی منتیں کیں، ان سے کہا کہ جو چاہئیے لے لو لیکن ہمیں مت مارو۔

ساہیوال واقعے میں جاں بحق ہونے والے خلیل کے اہلخانہ نے کے آئی ٹی کو تفصیلات کے مطابق بیان قلمبند کرا دیئے۔ خلیل کے بیٹے عمیر نے تحریری جواب میں کہا کہ پہلے ہماری گاڑی کے ٹائروں پر فائرنگ کی گئی۔ ٹائر پنکچر کرنے کے بعد اہلکاروں نے گاڑی سے اپنا ڈالا ٹکرا دیا اور گاڑی رک گئی۔ اہلکاروں نے اترتے ہی ذیشان پر گولیاں برسا دیں۔

عمیر نے بتایا کہ ذیشان کی موت کے بعد ابو نے اہلکاروں کی منتیں کیں کہ جو چاہیے لے لو لیکن ہمیں مت مارو۔ اسی دوران اہلکاروں میں سے ایک نے کسی کو فون بھی کیا۔ عمیر نے بتایا کہ ہمیں گاڑی سے اتار دیا گیا اور فون بند ہوتے ہی اہلکاروں نے دوبارہ فائرنگ کر دی۔

مقتول کے بھائی جلیل نے بیان دیا کہ میڈیا پر خبریں چلنے کے فوری بعد15 اور ریسکیو کو کال کی اور واقعہ کی معلومات لینے کی کوشش کی۔ دونوں ہیلپ لائنز پر کہا گیا کہ ہمیں ایسے کسی واقعہ کا علم نہیں۔

ادھر سانحہ ماڈل ٹاؤن کی نئی جے آئی ٹی کی تحقیقات بھی جاری ہیں۔ جے آئی ٹی نے سانحہ ماڈل ٹاون مقدمہ میں نامزد پولیس افسران اور اہلکاروں کے بیان قلمبند کرنا شروع کردیئے۔ مقدمے میں سابق ڈی آئی جی آپریشنز عبدالجبار، سابق ایس پی ماڈل ٹاؤن طارق عزیز، ایس ایس پی سکیورٹی سلمان، ایس ایچ او فیصل ٹاؤن اور درجنوں اہلکارنامزد ہیں۔

نئی جے آئی ٹی عوامی تحریک کے تمام گواہوں کے بیانات ریکارڈ کرچکی ہے۔ عوامی تحریک کی جانب سےتمام شواہد جےآئی ٹی کو فراہم کر دیئے گئے۔

احمد علی کیف  6 ماه پہلے

متعلقہ خبریں