سندھ ہائیکورٹ نے 8 سال بعد خانانی اینڈ کالیا اسکینڈل کا فیصلہ سنا دیا

کراچی (پبلک نیوز) سندھ ہائیکورٹ نے 8 سال بعد اربوں روپے کی منی لانڈرنگ سے متعلق خانانی اینڈ کالیا اسکینڈل کا فیصلہ سنا دیا۔ تمام ملزم بری کر دیئے گئے۔ وکیل صفائی نے کہا ٹرائل کورٹ میں 100 گواہ پیش کیے گئے۔ 42 نے ملزموں کے حق میں گواہی دی، سیشن عدالت میں بھی حوالہ ہنڈی ثابت نہیں ہوئی۔

 

اربوں ڈالر کی رقم منی لانڈرنگ کے ذریعے بیرون ملک بھیجنے کا معاملہ پر سندھ ہائیکورٹ نے 8 سال بعد فیصلہ سنا دیا۔ خانانی اینڈ کالیا اسکینڈل میں تمام ملزمان کو بری کردیا۔

 

2011 بینکنگ کورٹ نے 8 ملزمان کو بری کیا تھا جسے چیلنج کیا گیا تھا۔ وکیل صفائی حمل زبیدی کے مطابق مقدمہ میں ٹرائل کورٹ میں 100 گواہ چلائے گئے۔ 42 گواہان نے ملزمان کے حق میں گواہیاں دی۔

 

سیشن عدالت میں بھی حوالہ ہنڈی ثابت نہیں ہوئی۔ الزنونی ایکس چینج دبئی کی کمپنی ہے جس کا ملزمان سے کوئی تعلق نہیں۔ ڈپٹی اٹارنی جنرل اور ڈپٹی ڈائریکٹر بھی ایف آئی اے کی جانب سے عدالت میں پیش ہوئے۔ منی لانڈرنگ اسکینڈل میں حنیف کالی، مناف کالیا، جاوید خانانی، عاطف عزیز پولانی، بینکرز سید مسعود عباس، سید وجاہت علی، تسلیم احمد، عارف الرحمان شامل ہیں۔ جبکہ ایک ملزم جاوید خانانی نے خود کشی کر چکا ہے۔

حارث افضل  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں