کشکول توڑنے والے آج در در پر بھیک مانگ رہے ہیں: خورشید شاہ

اسلام آباد (پبلک نیوز) پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماء خورشید شاہ نے کہا ہے کہ دوائیوں کی قیمت میں تین سو فیصد سے ہزار فیصد تک اضافہ کیا گیا۔ کوئی ایک چیز تو بتاو جس میں بہتری لائی گئی ہو۔ آج لوگوں کی چیخیں نکل گئی ہیں۔ ابھی بجٹ آرہا اور چیخیں نکلیں گی۔

 

رہنماء پاکستان پیپلز پارٹی خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ ہم نے پہلے دن کہا لڑنا نہیں چاہتے۔ اس پر کیا گیا کہ ہم ڈر گئے ہیں۔ کہیں سے اب تک کوئی سرمایہ کاری نہیں آئی۔ بجٹ خسارہ میں امپورٹ ایکسپورٹ میں کتنا آپ کا خسارہ تھا۔ آپ کے پاس کوئی ایجنڈا نہیں۔ آپ کے پاس گالی گلوچ کا ایجنڈا ہے۔ ٹماٹر آج سو روپے کلو تک پہنچ گئے۔

 

خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ دوائیوں کی قیمت میں تین سو فیصد سے ہزار فیصد تک اضافہ کیا گیا۔ کوئی ایک چیز تو بتاو جس میں بہتری لائی گئی ہو۔ میرا صحافیوں سے سوال ہے مڈل کلاس کا پانچ سو سے بل پانچ ہزار پر چلا گیا۔ یوٹیلٹی سٹور بھی عوامی حکومت نے بند کردئیے۔ چینی نہیں، چاول نہیں آٹا نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ آج تین ہزار سات سو بلین سے اوپر ٹیکس نہیں جارہا کہتے تھے آٹھ ہزار بلین پر لیکر جائیں گے۔ آج لوگوں کی چیخیں نکل گئی ہیں۔ ابھی بجٹ آرہا اور چیخیں نکلیں گی۔ واحد حکومت جس نے ایمنسٹی سکیم چوروں کے لیے قرار دی۔ اب قوم سوال کرتی ہے حکومت کی ایمنسٹی چوروں کے لیے ہے؟ آج وہ بنگلہ دیش جس کو بھوکا بنگالی کہتے تھے ان کی برآمدات ہم سے زیادہ ہیں۔

 

انہوں نے مزید کہا کہ ہم گالی گلوچ میں پڑے رہے۔ پاکستان کو بچاو، ابھی دو ماہ پہلے ساری قوم ایک تھی۔ جب ساری قوم ایک ہوئی تو دنیا پریشان ہوئی۔ ملک تب بچے گا جب معیشت بچے گی۔ آپ کہتے تھے میں جوہری ہوں جو ہیروں کو پہچانتا ہوں۔ آپ کون سے ہیرے ہیں جس نے ہیرے کو پتھر بنا دیا۔  پاکستان کی عوام فوج کے ساتھ کھڑی ہے۔ ہمیں طاقت پر نہیں اتحاد و اتفاق پر بھروسہ کرنا چاہئیے۔

حارث افضل  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں