تربیت یافتہ سٹاف کی کمی، کراچی کے اسپتال موت بانٹنے لگے

کراچی (پبلک نیوز) شہر قائد کا سرکاری اسپتال ہو یا نجی اسپتال اب شہریوں میں خوف کی علامت بن گئے ہیں۔ ناتجربہ کار پیرا میڈیکل اسٹاف کے باعث معصوم لوگ جانوں سے جانے لگے۔ حکومت کی جانب سرکاری اور نجی اسپتالوں کے پیرا میڈیکل اسٹاف کی جانچ کے لیے کوئی اقدمات موجود نہیں۔

تفصیلات کے مطابق کراچی میں قائم پانچ سرکاری بڑئے اسپتال جن میں عباسی شہید، سول، جناح، ادارہ برائے امراض اطفال اور ادارہ برائے امراض قلب سمیت ان گنت بڑے اور چھوٹے نجی اسپتال موجود ہیں۔

شہریوں کی آس کراچی کے اسپتالوں میں آخر موت کا رقص کب سے کب تک جاری رہے گا۔ اسپتالوں میں ناتجربہ کار پیرا میڈیکل اسٹاف کی ٹرینینگ کا ذمہ دار کون ہے؟ حکومت کی جانب سے کوئی تسلی بخش جواب موجود نہیں۔

نجی و سرکاری اسپتالوں میں شہریوں کی جانیں ضائع ہونے کے بعد حکومت نیند سے بیدار ہوئی لیکن اس کے باوجود بھی کوئی خاطر خواہ اقدامات نہیں کیے گئے۔

رواں ماہ سے اب تک سرکاری اور نجی اسپتالوں میں موجود غیر تربیت یافتہ پیرا میڈیکل اسٹاف اور ڈاکڑز کی غفلت سے نشواہ، عصمت اور رضیہ کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔

ذرائع کے مطابق دارلصحت اسپتال کو سیل کرنے کے بعد کیا شہر قائد میں جاری یہ خون کی ہولی رک جائے گی یا یہ موت کا کھیل اسی طرح جاری رہے گا۔

احمد علی کیف  4 ہفتے پہلے

متعلقہ خبریں