لاہور ہائیکورٹ نے حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت 17 اپریل تک منظور کر لی

لاہور(ادریس شیخ)لاہور ہائی کورٹ نے نیب کو حمزہ شہباز کی گرفتاری سے روک دیا، عدالت نے17 اپریل تک حمزہ شہباز کی رمضان شوگر ملز اور صاف صاف پانی کمپنی میں عبوری ضمانت ایک، ایک کروڑ روپے کے دو ضمانتی مچلکوں کے عوض منظور کر لی۔

 

لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس ملک شہزاد اور جسٹس مرزا وقاص رؤف پر مشتمل بنچ نے اپوزیش لیڈر اور مسلم لیگ ن کے رہنماء حمزہ شہباز کی درخواست ضمانت پر سماعت کی، حمزہ شہباز کی جانب سے مؤقف اختیار کیا گیا کہ نیب کی طرف سے آمدن سے زائد سے اثاثہ کیس میں عبوری ضمانت منظور ہو چکی ہے۔ نیب کی طرف سے رمضان شوگر اور صاف پانی کیس میں گرفتاری کا خدشہ ہے۔

 

حمزہ شہباز کا مؤقف تھا کہ نیب پہلے بهی سیاستدانوں کو کسی اور انکوائری میں بلا کر دوسرے مقدمات میں گرفتار کر چکا ہے، خدشہ ہے کہ نیب کسی اور انکوائری میں بلا کر رمضان شوگر اور صاف پانی سکینڈل میں گرفتار کر لے گی، لہذا درخواست ضمانت قبل از گرفتاری منظور کی جائے۔

 

جسٹس ملک شہزاد نے دوران سماعت ریمارکس دیئے کہ اتنے لوگ اکٹھے ہو جاتے ہیں، عدالت کا ماحول خراب ہوتا ہے، کمرہ عدالت میں سیلفیاں بنائی جاتی ہیں، سب نمبر بنانے یہاں پر پہنچ جاتے ہیں، اپنے لوگوں کو منع کر دیں، جسٹس مرزا وقاص رؤف نے کہا کہ عدالتی تقدس کے بارے میں بتانے کی ضرورت نہیں ہے، سب کو پتہ ہے، تقدس کا خیال رکھا جائے۔ لاہور ہائی کورٹ نے حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت 17 اپریل تک منظور کرتے ہوئے نیب کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا۔

عطاء سبحانی  2 ماه پہلے

متعلقہ خبریں