لیہ میں کالج وین کے ڈرائیور نے طالبہ کو درندگی کا نشانہ بنا دیا

لیہ (پبلک نیوز) لیہ میں کالج وین کے ڈرائیور نے طالبہ کو درندگی کا نشانہ بنا دیا۔ ڈرائیور نے ساتھیوں کے ہمراہ طالبہ سے وین کے اندر اجتماعی زیادتی کی۔ وزیراعلیٰ نے دلخراش واقعے کا نوٹس لے لیا۔

 

سکول کالج وین کے ڈرائیورز سکیورٹی رسک ہیں۔ یہ معاملہ کئی بار میڈیا پر اٹھایا گیا لیکن حکام کے کان پر جوں نہیں رینگی۔ لیہ میں 17 سال کی معصوم طالبہ وین ڈرائیور کی درندگی کا نشانہ بن گئی۔ ملزم ابراہیم نے صبح 8 سے 10 بچوں کو کیری ڈبہ میں بٹھایا اور ان کے سکول کالج اتارا، متاثرہ لڑکی اکیلی رہ گئی تو اس کو کالج لے جانے کے بجائے آبادی سے دور لے گیا جہاں اس کے مزید 2 ساتھیوں نے لڑکی کو ہوس کا نشانہ بنایا۔ لڑکی کی حالت خراب ہونے پر ابراہیم اس کو نجی اسپتال کے باہر چھوڑ کر فرار ہو گیا۔

 

پولیس حکام کا کہنا ہے کہ میڈیکل رپورٹ میں زیادتی کی تصدیق ہو گئی ہے۔ پولیس نے مقدمہ درج کر کے واقعے میں ملوث 2 ملزم گرفتار کر لیے ہیں۔ وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار نے واقعہ کا نوٹس لے کر ڈی پی او لیہ سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار کا کہنا ہے کہ متاثرہ طالبہ کو ہر قیمت پر انصاف فراہم کیا جائے گا۔

 

لیہ کے واقعہ کے بعد ایک بار پھر سکول کالج وین ڈرائیورز کی سکروٹنی پر سوالیہ نشان لگ گیا ہے۔ متعدد واقعات کے باوجود حکومت اس حوالے سے کوئی بھی پالیسی لانے میں غیر سنجیدگی کا مظاہرہ کر رہی ہے۔

حارث افضل  3 ماه پہلے

متعلقہ خبریں